September 20, 2018

علیحدگی پسندوں کے ساتھ بات چیت

نئی دہلی،13؍مارچ، امور داخلہ کے وزیر مملکت جناب ہنس راج گنگا رام اہیر نے آج لوک سبھا میں پوچھے گئے ایک سوال کے تحریری جواب میں اطلاع دی  کہ  حکومت ہند نے انٹلی جنس بیورو کے سابق ڈائریکٹر جناب دنیشور شرما کو جموں وکشمیر ریاست میں منتخب عوامی نمائندوں ، مختلف تنظیموں اور متعلقھ افراد کے ساتھ بات چیت کا آغاز کرنے اور بات چیت کو آگے بڑھانے کے لئے اپنا نمائندہ مقرر کیا ہے۔ جموں وکشمیر کے لوگوں کی جانب سے اس سمت میں کافی مثبت رد عمل دیکھنے کو ملا ہے۔ سماج کے مختلف طبقوں بالخصوص نوجوانوں کی نمائندگی کرنے والے وفود  اور افراد بڑی تعداد میں حکومت ہند کے نمائندوں کے ساتھ بات چیت کرچکے ہیں۔

حکومت ہند ریاست جموں وکشمیر میں امن کو بحال کرنے کے لئے عہد بستہ ہے اور سماج کے ان تمام طبقات کے ساتھ بات چیت کرنے کے لئے تیار ہے جو دستور ہند کے فریم ورک کے اندر تشدد کے راستے چھوڑ دیتے ہیں۔

حکومت جموں وکشمیر میں سلامتی کے حالات کا مسلسل جائزہ لیتی ہے اور وقتاً فوقتاً ضروری احکامات دئے جاتے ہیں۔ ملی ٹینسی کی سرگرمیوں کی روک تھام کے لئے متعدد اقدامات کئے گئے ہیں۔ ان اقدامات میں اضافہ شدہ انسان انٹلی جنس کے ساتھ آپریشنل گرڈ کو مستحکم کرنا اور ٹیکنیکل انٹلی جنس گر ڈ کا استعمال کرنا شامل ہے۔ حکومت نے ریاست کے نوجوانوں کو ملک کے اصل دھارے میں لانے کے لئے  مسلسل پالیسیوں کی حوصلہ افزائی کی ہے ۔ اسی میں عسکریت اور ملی ٹینسی سے انہیں دور رکھنے کے لئے  ان کے لئے روزگار کے مواقع مہیا کرنا بھی شامل ہیں۔ وزیراعظم ترقیاتی پیکج 2015 کے تحت  80086 کروڑ روپے کا اعلان کیا گیا ہے۔

Post source : Pib