September 30, 2020

مولاناآزاد یونیورسٹی میں سائنس لیباریٹریز کا افتتاح

مولاناآزاد یونیورسٹی میں سائنس لیباریٹریز کا افتتاح

سائنسی علوم کی کتابوں کے ترجمے میں سائنسی اصطلات اور نظریات کو جوں کا توں رکھا جائے گا تاکہ یونیورسٹی سے فارغ طلبہ اپنی اعلیٰ تعلیم ملک یا بیرون ملک کسی بھی یونیورسٹی سے بہ آسانی حاصل کریں۔ یونیورسٹی میں جلد از جلد تمام کورسز کے نصابی کتابوں کا اردو ترجمہ ہوجائے گا۔ کورسز کے نصابی مواد کی تیاری کے بعد ہی نئے کورسز کا آغاز ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر محمد اسلم پرویز، وائس چانسلر نے مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی میں آج انڈر گریجویٹ سائنس لیباریٹریز (طبیعیات، کیمیاء، نباتیات، حیوانیات اور ریاضی) کے افتتاح کے موقع پر کیا۔

انہوں نےلیابس کے افتتاح پر تمام اساتذہ کو مبارکبا دی۔ انہوں نے پروگرام کے آغاز پر قرأت کلام پاک کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ قرآن مجید اور سائنس کا گہرا تعلق ہے۔ انہوں نے سائنس کو معرفت الٰہی کا بہترین ذریعہ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ قرآن کو سمجھنے کے لیے ہمیں اسے ترجمہ سے پڑھنا ہوگا۔ صرف عربی میں پڑھنے کی اپنی روش میں ہمیں تبدیلی لانی ہوگی۔ کائنات کے وجود میں آنے سے قبل کی کیفیت اور پانی کے زندگی کی بنیاد ہونے

سے متعلق قرآنی آیات کا بھی انہوں نے حوالہ دیا۔
ڈاکٹر شکیل احمد، رجسٹرار نے اپنے خطاب میں کہا کہ طلبہ اور اساتذہ کو لیب میں زیادہ سے زیادہ وقت دیں۔ تبھی طلبہ انہیں بہتر طور پر سمجھ پائیں گے۔ پروفیسر پی فضل الرحمن، ڈین اسکول برائے سائنسی علوم نے خیر مقدم کیا۔ ڈاکٹر مقبول احمد، صدر شعبۂ نباتیات نے کاروائی چلائی۔ پروفیسر نجم الحسن، ڈین تعلیمات اور صدر شعبۂ ریاضی نے شکریہ ادا کیا۔ ابتداء میں طالب علم فتح رسول کی قرأت کلام پاک سے جلسہ کا آغاز ہوا۔ اساتذہ اور طلبہ کی بڑی تعداد شریک تھی۔

Post source : pressnote