December 13, 2018

بھارت کے سب سے وزنی مواصلاتی سیارچہ جی ایس اے ٹی -11 فرنچ کا کامیاب تحربہ

نئی دہلی05دسمبر۔انڈین اسپیس ریسرچ آرگنائزیشن (آئی ایس آر او) کا سب سے ترقی یافتہ تھروپٹ مواصلاتی سیارچہ یعنی جی ایس اے ٹی -11  بڑی کامیابی کے ساتھ دن کے اوائل حصے میں اسپیس پورٹ ، فرنچ گویانہ سے داغا گیا ۔

 سیارچہ  لے جانے والی گاڑی ایرینا 5 وی اے -246  نے فرنچ گویانہ میں کوروولانچ بیس دن میں  دو بج کر سات منٹ پر (بھارتی معیاری وقت کے مطابق )چھوڑا۔ یہ گاڑی  بھارت کے جی ایس اے ٹی -11  اور جنوبی کوریا کے وی ای او –کے او ایم پی ایس اے ٹی -2 اے سیارچے لے کر اپنے طے شدہ پروگرام کے مطابق روانہ ہوئی ۔ ایرینا  5  ان تین سیارچہ داغنے و الی گاڑیوں میں شمار ہوتی ہے ، جنہیں سو یز اورویگا کےساتھ ایرینا اسپیس  کے ذریعہ چلایا جاتا ہے ۔

 30 منٹ کی پرواز کے بعد ، جی ایس اے ٹی -11  ایرینا 5  کے اپراسٹیج سے الگ ہوکر مخصوص جی او سنکرونس تغیراتی مدار میں پہنچ گیا۔جس مدار تک یہ سیارچہ پہنچا اس مدار سے اگلا درکا رمدار بہت قریب ہے ۔

 5858 کلوگرام وزنی جی ایس اے ٹی -11  بھارتی سرزمین کے استعمال کرنے والوں کو نیز جزائر پررہنے والوں کو 32  یوزر بیموں کے ذریعہ کی بینڈ کے توسط سے 8 اپ بیموں کے ساتھ کا بینڈ  کی شکل میں اعلیٰ اعدادوشمار اوراسی شرح کی کنکٹوٹی فراہم کرے گا۔

 اسرو کے چیئر مین ڈاکٹر کے سیون نے کہا کہ جی ایس اے ٹی -11 ملک کی  دیہی اور ناقابل رسائی گرام پنچایتوں تک  جو بھارت نیٹ ورک کے تحت آتی ہیں ، کو براڈ بینڈ کنکٹوٹی  فراہم کرنے میں مددگار ہوگا۔ یہ مقصد ڈجیٹل انڈیا پروگرام کا ایک حصہ ہے ۔

 بھارت نیٹ پروجیکٹ کا مقصد ای – بینکنگ ،ای- ہیلتھ ،ای- حکمرانی سمیت  دیگرعوامی فلاح وبہبود کے  امور کو وسعت دینا ہے ۔

 جی ایس اے ٹی -11  کے بارے میں ڈاکٹر سیون کا کہنا ہے کہ یہ سیارچہ مستقبل کے تمام تر  سیارچوں کے لئے پیشرو کے طورپر کام کرے گا۔آج کے کامیاب مشن نے پوری ٹیم کی ہمت بڑھائی ہے ۔

 پوسٹ سی پریشن کے بعد کرناٹک کے ہاسن میں واقع آئی ایس آر او ماسٹر کنٹرول سہولت نے  جی ایس اے ٹی -11 کی کمان اورکنٹرول اپنے ہاتھ میں لے لی اور یہ انکشاف ہوا کہ اس کی صحت کی کسوٹیاں  حسب معمول ہیں ۔

  یہ سیارچہ  آنے والے دنوں میں مرحلے وار طریقے سے مدار تک پہنچنے کے اقدامات کرے گا اور اپنے آپ کو  جی او اسٹیشنر ی مدار(خط استواسے  36ہزار کلومیٹر  کی بلندی پر) مدار میں پہنچائے گا اور اس کام کے لئے آن بورڈ پروپلزن نظام اپنائے گا۔ جی ایس اے ٹی -11  کو  جی او اسٹیشنر ی مدار میں  74 ڈگری مشرقی طول البلد پر جی او اسٹیشنری مدار میں قائم کیا جائے گا۔

 بعد ازاں جی ایس اے ٹی -11 کے دوشمسی حصے اور چار انٹینا ری فلیکٹر  مدار میں تعینات کئے جائیں گے ۔ یہ سیٹلائٹ  مدار کے لئے پہلے سے متعینہ تمام تر تجربات سے گزرنے کے بعد آپریشنل ہوگا یعنی کام کرنا شروع کرے گا۔

 گزشتہ 21 دنوں کے دوران اسرو نے بڑی کامیابی سے تین سیارچے مکمل کئے ہیں اور ایسے ہی دو لانچ  وھیکل مشنو ں کو پایہ تکمیل تک پہنچایا ہے ۔

Post source : pib