July 20, 2019

سائیکل ٹیکسی میں کام کرنے والے کی بیٹی کا دسویں جماعت میں شاندار مظاہرہ

سائیکل ٹیکسی میں کام کرنے والے کی بیٹی کا دسویں جماعت میں شاندار مظاہرہ

میدک سے ریاض احمد کی رپورٹ

میدک -15 مئی ( اردو لیکس) تلنگانہ کے کاماریڈی ضلع کے ناگا ریڈی پیٹ کے رہنے والے محمد امجد کی دختر نسیمہ نے دسویں جماعت کے امتحانات میں جو مظاہرہ کیا ہے اس سے مسلم معاشرے میں مسرت کی لہر دوڑ گئی ہے سرکاری مدرسے میں تعلیم حاصل کرنے والی نسیمہ جس کا تعلق غریب گھرانے سے  ہے بتایا جاتا ہے کہ محمد امجد ایک سائیل ٹیکسی میں کام کرتے ہیں اور انھیں خود کی ذاتی سیکل تک نہیں ہے دن رات محنت کرتے ہوئے نسیمہ نے جو مظاہرہ کیا ہے و ہ قابل ستایش ہے موجودہ دور میں سرمایہ دار اور دولت مند اپنے بچوں کو معیاری تعلیم  کے نام پر پاش اسکولوں میں داخلہ دلوا کر ترقی کے زینے حاصل کرنا چاہتے ہیں لیکن والد کی معاشی تنگدستی کے باوجود نسیمہ نے سرکاری مدرسے میں تعلیم حاصل کر کے والدین کا نام روشن کردیا ہے والد سائیکل بناکر اور والدہ سلائی کا کام کرکے اپنے خاندان کی کفالت کیا کرتے ہیں لیکن بچوں کو تعلیم کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے لڑ کیو ں کی ہمیشہ حوصلہ افزائی کی ہر موڑ پر ان کو کسی قسم کی تکلیف ہونے نہیں دیا نسیمہ کہتی ہے کہ والدین کی مجبوری کو دیکھتے ہوئے انھوں نے عزم کر لیا کہ تعلیم کے ذریعہ ہی ترقی کی جاسکتی ہے استاد کی رہنمائی والدین کی حوصلہ افزائی نے انہیں اس مقام تک پہنچا دیا ہے  چھوٹے سے مکان میں رہنے والے امجد اپنی لڑکیوں کو کسی خانگی یا اعلی  میعاری ا سکول میں داخلہ دلوانے سے قاصر ہیں۔کیونکہ کمائی اتنی مختصر تھی کہ تین وقت کھانا ھی مشکل تھا ۔محنت کرکے اپنے لڑکیوں کی کسی بھی طرح تعلیم کو جاری رکھنے دیا ہے اور نسیمہ نے والدین کی امید و ں پر کھر ی اور کامیابی حاصل کرلی ہے اس خاندان کا المیہ یہ ہے بڑی لڑکی نے بھی دسویں جماعت میں شاندار کامیابی حاصل کی تھی لیکن معاشی بدحالی کے باعث انٹرمیڈیٹ کی تعلیم کو مکمل نہ کرسکیں اور تعلیم کو ترک کرتے ہوئے والدہ کے ساتھ تعاون کرنے پر مجبور ہوگئی اب دوسری لڑکی نے یہ تعلیمی مظاہرہ کیا ہے لیکن والدین کو ڈر ہے اس کی لڑکی تھی ترک تعلیم پر مجبور نہ ہوجائے کیونکہ معاشی حالات اتنی مضبوط نہیں کہ وہ اگے اپنی لڑکی کو تعلیم دلوا سکیں ۔لڑکی کی کامیابی سے تو والدین  خوش ہیں لیکن دوسری جانب مستقبل کو لے کر فکر مند ہے سرکار سے مدد کی طلب گار ہیں ایسے طالبات کی اگر حکو مت مدد کریگی تو یہ لڑکی نہ صرف ترقی کرسکے گی بلکہ معاشرے میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوا سکتی ہے۔۔

 

Post source : Urduleaks news network