October 23, 2019

ممبئی لوکل ٹرین بم دھماکہ معاملہ،پیپر بک تیار کرنے کا عمل ہنوز جاری، استغاثہ نے چار ہفتوں کی مہلت طلب کی

ممبئی ۴ جون/ 7/11 ممبئی لوکل ٹرین بم دھماکہ معاملے میں آج نچلی عدالت کا ریکارڈ مکمل تیار نہیں ہونے کی وجہ سے ہائی کورٹ نے معاملے کی سماعت چار ہفتوں کے لیئے ملتوی کردی اسی درمیان جمعیۃعلماء مہاراشٹر (ارشد مدنی)کے وکلاء نے عدالت کو بتایا کہ ریاستی حکومت کی جانب سے تیار کی گئی پیپر بک میں تقریباً سو صفحات ایسے ہیں جو پڑھنے کے قابل نہیں ہے اور ان کے بغیر اپیل پر سماعت اگر شروع ہوئی تو دفاعی وکلاء کو مشکلات کا سامنا ہوگا۔
دفاعی وکلاء گورو بھوانی، ادتیہ مہیتا، شاہد ندیم، عبدالحفیظ اور عادل شیخ نے ممبئی ہائی کورٹ کی دو رکنی بینچ کو بتایا کہ انہیں رجسٹرار کی جانب سے پیپر بک حاصل ہوگئی ہے اور اس کا مطالعہ کرنے کے بعد انہیں محسوس ہوا کہ درجنوں صفحات ایسے ہیں جو پڑھنے کے قابل نہیں ہے لہذا عدالت استغاثہ اور رجسٹری کو حکم دے کہ وہ ان صفحات کو دوبارہ پڑھنے کے قابل بنائے۔
دو رکنی بینچ کے جسٹس دھرم ادھیکاری اور جسٹس سواپنا جوشی نے سرکاری وکیل راجا ٹھاکر ے کو حکم دیا کہ وہ چار ہفتوں کے اندر بقیہ کام مکمل کرلیں تاکہ حتمی بحث شروع کی جاسکے۔
اسی درمیان ملزمین ماجد شفیع اور ساجد مرغوب انصاری جنہیں عمر قید کی سزا ہوئی ہے کی اپیل داخل کرنے والے ایڈوکیٹ عشرت خان نے عدالت کو بتایا کہ انہیں ابھی تک پیپر بک ملی نہیں ہے لہذا عدالت رجسٹری کو حکم دے کہ وہ انہیں بھی دو عدد پیپر بک مہیا کرائے۔
عدالت نے جب وکلا استغاثہ راجا ٹھاکرے اور چملکر سے دریافت کیا کہ ابھی تک متذکری دونوں ملزمین کو پیپر بک کیوں مہیا نہیں کرائی گئی ہے تو وکلاء نے عدالت کو بتایا کہ رجسٹری نے صرف چھ عدد پیپر بک تیار کیا ہے، پانچ پھانسی کی سزا پانے والے ملزمین کے لیئے اور ایک عدد عدالت کے ریکارڈ کے لیئے۔
دفاعی وکلاء کے انکشاف کے بعد عدالت نے رجسٹری کو حکم دیا کہ فوراً مزید پیپر بک تیار کیئے جائیں اور ملزمین کو مہیا کرایا جائے تاکہ ان کی اپیلوں پر بھی سماعت شروع کی جاسکے۔
واضح رہے کہ خصوصی مکوکا عدالت کے جج وائی ڈی شندے نے ممبئی لوکل ٹرین بم دھماکہ کا فیصلہ سناتے ہوئے پانچ ملزمین احتشام قطب الدین صدیقی، کمال انصاری، فیصل عطاء الرحمن شیخ، آصف بشیر اور نوید حسین کو پھانسی اور ۷/ ملزمین محمد علی شیخ، سہیل شیخ، ضمیر لطیف الرحمن، ڈاکٹر تنویر، مزمل عطاء الرحمن شیخ،ماجد شفیع، ساجد مرغوب انصاری کو عمر قید کی سزا سنائی تھی جبکہ ایک ملزم عبدالواحید دین محمد کو باعزت بری کردیا تھا۔

Post source : press note