August 24, 2019

ہندوستان کی جی ڈی پی کی شرح میں اضافہ کے اعداد شمار گمراہ کن: اروند سبرامینم

ہندوستان کی جی ڈی پی کی شرح میں اضافہ کے اعداد شمار گمراہ کن: اروند سبرامینم
Photo Credit To Imagine

حیدرآباد-12 جون ( اردو لیکس) ہندوستان کے سابق چیف اکنامک اڈوایزر اور ماہر اقتصادیات اروند سبرامینم  نے کہا ہے کہ ملک کی جی ڈی پی (گھریلو مجموعی پیداوار) کو بڑھاچڑھاکر پیش کیا گیاہے‌۔ روزنامہ ہندو کے مطابق ہاورڈ یونیورسٹی میں شائع ہوئے سبرامینم کے تحقیقی مقالہ کے مطابق ملک کی اقتصادی ترقی کے جو اعداد و شمار پیش کیے گئے وہ گمراہ کن اور مبالغہ آمیز تھے۔سال 2011سے12 اور 2016سے17 کے دوران جی ڈی پی کی شرح میں سات فیصدکا  سالانہ اضافہ کا تخمینہ لگایا گیا تھا لیکن اسکے حقیقی اعدادوشمارنسبتاًکم یعنی 4.5 فیصد تھے۔سبرامنیم کے مطابق جی ڈی پی کے اعداد میں تضاد کی اہم وجہ ملک کا پیداواری شعبہ رہا ۔ سال 2011 سے  مصنوعات اور صنعتی پیداوار اشاریہ اور پیداواری شعبہ کی برآمدات سے متعلق ہوا کرتا  تھا بعدازاں اسمیں انحطاط ہوا۔  سبرامنیم کے ریسرچ پیپر کے مطابق 2011جی ڈی پی کی شرح میں اضافہ کے تخمینہ لگانے کیلئے  17 اہم اقتصادی پوائنٹ ہوتے ہیں لیکن ایم سی اے-21 ڈیٹا بیس میں ان نکات کو شامل نہیں کیا گیا۔  انکے مطابق ہندوستان نے جی ڈی پی کی شرح کا اندازہ لگانے کےلیے مواد کے حصول کے ذرائع اور اسکے طریقہ کار میں سال 2011 اور 2012 کے دوران تبدیلیاں کی تھیں جسکی وجہ سے ترقی کی شرح میں غیر معمولی اضافہ دکھایا گیا۔

Post source : urduleaks news network