October 23, 2019

اردو زبان ہمارے تہذیب و ثقافت کی پہچان،بزم کہکشاں محبوب نگر

اردو زبان ہمارے تہذیب و ثقافت کی پہچان،بزم کہکشاں محبوب نگر

محبوب نگر7 اکتوبر(ای میل)اردو ہماری مادری زبان ہے ہندوستان میں اس زبان کے بولنے والوں کا وسیع حلقہ پایا جاتا ہے، اس زبان کو نسل نو میں عام کرنا وقت کا اہم تقاضہ ہے تاکہ ہماری تہذیب و ثقافت کا تحفظ ہو ان خیالات کا اظہار حلیم بابر نے آج بزم کہکشاں اور اردو ڈیولپمنٹ کمیٹی محبوب نگر کے ادبی اجلاس کے صدارتی خطاب سے کیا انہوں نے مزید کہاکہ اردو کے فروغ میں نوجوانوں کو آگے آنا چاہئے اور اردو کی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا چاہئے۔ قبل ازیں ڈاکٹر عزیز سہیل نے اپنے خطاب میں ڈاکٹر شیخ نیاز الدین صابری کا شخصی تعارف اور ان کی خدمات پر روشنی ڈالی اور اردو کے فروغ سے متعلق مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ میں حیدرآباد کے بعد نظام آباد و محبوب نگر میں اردو کا ساز گار ماحول پایاجاتا ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ فروغ اردو کے عمل کو تیز کیا جائے،آؤ اردوسیکھیں پروگرام،اردو شاعری کی اصلاح کے پروگرام کا آغاز کیا جائے،مختلف موقعوں پر طلبہ کے لئے تحریری و تقریری مقابلوں کا انعقاد عمل میں لایاجانا چاہئے۔اس تہنیتی جلسہ کو مخاطب کرتے ہوئے ڈاکٹر شیخ سیادت علی نے کہا کہ اردو ریاست کی دوسری سرکاری زبان ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ تلنگانہ میں اردو کے فروغ اور نفاذ کے لئے حکومت سے مشترکہ طور پر انجمنوں کی جانب سے نمائندگی ہو اور اردو کو روزگار سے جوڑنے کے اقدامت ہونے چاہئے اردو زبان صرف مسلمانوں کی زبان نہیں ہے بلکہ دیگر مذاہب کے لوگ بھی اردو بولتے ہیں،زبان سے لاپروہی کے نتیجہ میں ہم اپنی تہذیب سے دور ہوتے جارہے ہیں۔قبل ازیں ڈاکٹر بشیر احمد پرنسپل المدینہ کالج نے اپنے خطاب میں کہاکہ بزم کہکشاں اور اردو ڈیولپمنٹ کمیٹی اردو کی سرگرمیاں لائق تحسین ہے،اردو زبان میں تحقیق و تنقید کا عمل جاری رہنا چاہئے اس کے ساتھ ساتھ فردکا احتساب بھی ہونا چاہئے،طلبہ میں مطالعہ کے شوق کو پیدا کیا جائے،ان میں ادبی ماحول کو فروغ دیا جائے اور ا ن کے اندر لیاقت اور صلاحیتوں پیدا کی جانی چاہئے تاکہ وہ وقت تقاضوں کو پورا کر سکیں۔اس پروگرام کا آغاز کلیم اللہ حسینی کے نعت سے ہوا،اس موقع پر سلیم اقبال صدر اردو ڈیولپمنٹ کمیٹی محبوب نگر،نورالحسنین عیدگاہ کمیٹی،صحافی محسن خان(حیدرآباد)ظہیر ناصری،محمد علی دانش نے بھی خطاب فرمایا۔اس موقع پر ڈاکٹر شیخ نیاز الدین صابری کو ڈاکٹریٹ کی تکمیل پر انجنئیرصادق اللہ،یوسف بن ناصرکے ہاتھوں تہنیت پیش کی گئی سپاس نامہ دیا گیا۔بعدازاں جناب ظہیر ناصری کی صدارت میں غیر طرحی مشاعرہ منعقد ہوا جس میں حلیم بابر،صادق فریدی،چچا پالموری،محبت علی منان،اسمعیل قیصر نے کلام سنایا۔ڈاکٹر شیخ نیاز الدین صابری کے شکریہ پر پروگرام اختتام پذیر ہوا۔

Post source : press note