June 03, 2020

چارمینار کے پاس عید کی شاپنگ کی گہماگہمی ختم

چارمینار کے پاس عید کی شاپنگ کی گہماگہمی ختم

 حیدرآباد -21 مئی ( اردو لیکس) لاک ڈاون میں نرمی کے باوجود حیدرآباد شہر میں گذشتہ برسوں کی طرح کی تجارتی سرگرمیاں نہیں دیکھی جارہی ہیں کیونکہ لوگ شاپنگ کو ترجیح نہیں دے رہے ہیں۔گذشتہ کئی دہائیوں سے یہ روایت رہی ہے کہ رمضان کی آمد کے بعد سے ہی شہر بالخصوص پرانا شہر میں کافی ہنگامی سرگرمیاں دیکھی جاتی تھیں جو اب لاک ڈاون میں نرمی کے باوجود نہ کے برابر ہیں۔اس ماہ میں تاریخی چارمینارکے علاوہ پتھر گٹی اور دیگر علاقوں میں شاپنگ کی دھوم ہوتی تھی  اور لوگ خریداری کرنے کے لئے نہ صرف نئے شہر بلکہ تلنگانہ کے اضلاع سے بھی بڑی تعداد میں یہاں آتے تھے۔ یہی بات اس کو انفرادیت بخشتی تھی۔دکانداروں کا کہنا مہندی   چوڑیاں، کراکری کا سامان ہو یا سوئیاں،خشک میوے جات ہوں یا مصنوعی زیورات،ہینڈ بیگس، پارچہ جات ہی کیوں نہ ہوں،لوگ بالخصوص خواتین کی بڑی تعداد شاپنگ کے لئے شام چار بجے سے ہی نکل پڑتی تھی تاہم اس مرتبہ رمضان میں صورتحال برعکس نظر آرہی ہے،اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ لاک ڈاون نے تمام کے لئے معاشی مسائل پیداکردیئے ہیں اور کئی افراد نے عید کو سادگی سے منانے کا فیصلہ کیا ہے جس کے نتیجہ میں رمضان کے آخری دنوں میں لاک ڈاون میں نرمی کے باوجود ان کا کاروبار نہ کے برابر ہے ہ  ۔ اس علاقہ میں ٹھیلہ بنڈیوں پر مختلف سامان فروخت کرنے والوں کا کاروبار  بھی رمضان کے دوران کافی اضافہ ہوتا تھا۔ان افراد کا بھی کہنا ہے کہ اس مرتبہ خریداری کرنے والوں کی کمی ہوئی ہے کیونکہ لاک ڈاون کی صورتحال نے تمام کو کسی نہ کسی معاشی مسئلہ سے دوچار کردیا ہے۔یہ ٹھیلہ بنڈی والے شاہ علی بنڈہ سے نیا پل تک بنڈیوں پر اپنا کاروبار کرتے ہیں۔

Post source : Urduleaks