November 26, 2020

گلناز خاتون کے قاتلوں کو سخت سزا دی جائے۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ

گلناز خاتون کے قاتلوں کو سخت سزا دی جائے۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ

نئی دہلی 20 نومبر(پریس ریلیز) ویمن انڈیا موؤمنٹ(WIM) کی قومی صدر مہرالنساء خان نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ایک مسلم لڑکی گلناز خاتون کے بہیمانہ قتل کے واقعے کو بہار پولیس نے جان بوجھ کر چھپایا ہے جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ بہار حکومت مجرموں سے ملی ہوئی ہے۔ نتیش کمار کی ایما پر قاتلوں کو گرفتار کرنے میں بہار پولیس کی غفلت اور امتیازی سلوک پر انہوں نے شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انتخابی فوائد کیلئے مجرموں کو تحفظ فراہم کیا گیا ہے۔ کیا اس معصوم بچی کے ساتھ انصاف صرف اس لئے نہیں ہوا کہ وہ مسلمان تھی؟۔ کیا وہ اس ملک کی بیٹی نہیں ہے؟۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ ملک میں این ڈی اے حکومت کی امتیازی پالیسیوں اور خواتین کے تحفظ میں ناکامی کی سخت مذمت کرتی ہے۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ کی قومی صدر مہرالنساء خان نے مزید کہا ہے کہ بہار، اتر پردیش کے نقش قدم پر چل رہا ہے جہاں خواتین کے خلاف ہزاروں زیادتیوں کی اطلاع ملی ہے بہت سے معاملات میں حکومت سیاسی وجوہات کے بنا پر مجرموں کے خلاف مقدمہ چلانے کی زحمت گوارا نہیں کرتی ہے۔ بی جے پی کی حکمرانی والی ریاستوں میں یہ عام بات ہے کہ عصمت دری کے واقعات بڑے پیمانے پر رونما ہورہے ہیں اور ملزمان استشنی سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔ گلناز خاتون، ایک معصوم مسلم لڑکی کو زندہ جلا دیا گیا ہے اور دوسری طرف بی جے پی ملک میں لو جہاد کے خاتمے کیلئے نعرے بلند کررہی ہے۔ ایک ہندو لڑکے سے شادی سے انکار کرنے پر ایک مسلمان لڑکی کو زندہ جلادیا گیاہے۔ کیا یہ ‘کیسری محبت ‘نہیں تھی جس میں ایک مسلمان لڑکی نفرت کا شکار ہوگئی؟۔ویمن انڈیا موؤمنٹ کی قومی صدر مہرالنساء خان نے اپنے بیان میں مزید کہا ہے کہ گلناز خاتون کے ساتھ ہونے والے اس واقعے نے پورے ملک کو ہلا کر رکھ دیا ہے اور اس معاملے میں بہار پولیس کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہئے کیونکہ انہوں نے صرف انتخابی فوائد کے خاطر اتنے سنگین جرم کو چھپا دیا تھا۔ مسنر خان نے حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ نتیش کمار اس خوفناک واقعے پر اب بھی خاموش کیوں ہیں۔ میڈیا بھی اس پر مکمل خاموش ہے اور کہیں سے بھی کوئی آواز نہیں اٹھائی جارہی ہے۔ وزیر اعظم کا نعرہ ‘بیٹی بچاؤ بیٹی پڑھاؤ ‘بی جے پی کی حکمرانی والی ریاستوں میں ایک مذاق بن کر رہ گیا ہے، جہاں خواتین عصمت دری اور قتل کے واقعات کا شکار ہیں لیکن پولیس اور حکومت بے شرمی سے ان معاملات کو چھپانے میں لگے ہوئے ہیں۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ کا ہمیشہ سے اصرار رہا ہے کہ خواتین پر عصمت دری اور حملوں کے واقعات کے خلاف سخت قوانین نافذ کیا جائے۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ صدر جمہوریہ سے پر زور مطالبہ کرتی ہے کہ صدر ہند ریاستی حکومت کو ہدایت کریں کہ وہ خواتین کی عزت و آبرو کی حفاظت کیلئے قانون نافذ کریں۔