سماج کی تشکیلِ نو میں طلبہء و فارغین مدارس کی اہمیت کے زیر عنوان ایس آئی او تلنگانہ کا ویبینار،مفتی عمر عابدین مدنی، مولانا عظیم الدین فلاحی کے خطابات


حیدرآباد _ 28 فروری ( اردولیکس)اسٹوڈنٹس اسلامک آرگنایزیشن آف انڈیا (ایس آئی او) حلقہ تلنگانہ کی جانب سے دینی مدارس طلبہ کے لیے ایک اہم آن لائن پروگرام بعنوان ” سماج کی تشکیلِ نو میں طلباء و فارغین مدارس کی اہمیت، ضرورت اور افادیت”  منعقد کیا گیا۔ اس پروگرام میں مہمانان خصوصی کے طور پر مفتی عمر عابدین مدنی وقاسمی، مولانا عظیم الدین فلاحی اور ڈاکٹر طلحہ فیاض الدین (صدر حلقہ ایس آئی او، حلقہ تلنگانہ) نے خطاب کیا۔ پروگرام کا آغاز حافظ عمیر محی الدین کی تلاوت کلام پاک سے ہوا، حافظ سید وصی اللہ (دینی مدارس آرگنائزر) نے افتتاحی کلمات ادا کرتے ہوئے پروگرام کے مقاصد سے واقف کروایا۔انہوں نے کہا کہ دینی مدارس ملت اسلامیہ ہند کی تاریخ کا درخشاں پہلو ہیں، ملت اسلامیہ کی دینی تربیت میں مدارس اسلامیہ کا اہم کردار رہا ہے، موجودہ حالات میں بھی طلبہ مدارس کی اہمیت مزید بڑھ جاتی ہے اور ضروری ہے کہ طلبہ مدارس اپنی ذمہ داری کو سمجھتے ہوئے سماج کی تشکیل نو میں اپنا کردار ادا کریں، اسی مقصد کے تحت یہ پروگرام منعقد کیا گیا۔ اس موقع پر مولانا عظیم الدین فلاحی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ فی الوقت سماج بہت سارے مسائل سے جوجھ رہا ہے۔ سماج میں بے حیایی، فحاشی و عریانیت  عام ہے، نوجوانوں میں مقصد کی طرف توجہ نہیں ہے، مذہب بیزاری کا رجحان بھی عام ہوتا جارہا ہے، نوجوان احساس کمتری کا شکار ہے، ایسے میں مسلمانوں کے اہم طبقہ کو اپنی ذمہ داری کو محسوس کرنا ضروری ہے، علماء انبیاء کے وارث ہیں،مساجد میں بھی علما اور ائمہ کی اہمیت مسلم ہے، ضرورت اس بات کی ہے کہ علماء اپنی حیثیت کو منوائیں،مطالعہ کے ذریعہ علمی لیاقت کو بڑھائیں،  نوجوانوں کو اپنی جانب متوجہ کرتے ہوئے ان کی تربیت کریں۔ مفتی عمر عابدین قاسمی و مدنی نے ویبنار میں مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے موضوعات پر مستقل گفتگو کرنے کی ضرورت ہے۔ مدارس کا دائرہ آزادی ہند سے پہلے بہت بڑا تھا اس وقت دین اور دنیا کے علوم میں کوئی تفریق نہیں تھی بد قسمتی سے ایک خاص شعبہ تک محدود کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ مدارس کے طلباء و فارغین موجودہ زمانے کو چیالنج کرنے کے لئے موجودہ حالات کی واقفیت، مواصلاتی مہارت، تخلیقی صلاحیتیں اپنے اندر پیدا کریں۔ ڈاکٹر طلحہ فیاض الدین صدر حلقہ ایس آئی او تلنگانہ نے ویبنار کے صدارتی خطاب میں کہا کہ علم کے معاملہ میں تحقیق و ترقی کے کام کا نہ ہونا، اور ماضی کے مباحث میں الجھے رہنا، استعداد اور صلاحیت کے اعتبار سے زمانہ کی رفتار سے پیچھے رہ جانا غلامی کی ذہنیت کی علامت ہے۔ دینی مدارس سے ہماری یہ توقع ہے کہ وہ امت کو غلامی سے بچا کر امامت کے منصب پر لانے اور سماج کی تشکیل نو  میں اپنا کردار ادا کرنے میں کلیدی رول اداکریں گے۔