جنرل نیوز

داعی دین حضرت مولانا غلام نبی شاہ نقشبندی کا سانحہ ارتحال امیر حلقہ جماعت اسلامی ہند تلنگانہ، مولانا حامد محمد خان کا اظہار تعزیت

حیدرآباد 10 مارچ (پریس نوٹ) داعی دین و شہر حیدرآباد کے معروف عالم حضرت مولانا غلام نبی شاہ نقشبندی کے سانحہ ارتحال پراظہار تعزیت کر تے ہوئے امیر حلقہ جماعت اسلامی ہند حلقہ تلنگانہ مولانا حامد محمد خان نے اپنے صحافتی بیان میں کہا کہ مولانا غلام نبی شاہ نقشبندی کے انتقال سے ملت اسلامیہ ایک باعمل داعی دین سے محروم ہو گئی ہے۔ مولانا غلام نبی شاہ نقشبندی خصوصیت کے ساتھ غیر مسلم برادران وطن میں دین کی دعوت کاکام انتہائی تڑپ و خلوص کے ساتھ کیا کرتے تھے۔ مولانا چاہتے تھے کہ لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت اور اُن کے لائے ہوئے دین پر ایمان لاتے ہو ئے دنیوی و اخروی کامیابی حاصل کریں۔ مولانا مرحوم کو مسلک سے زیادہ مقصد کی فکر تھی وہ ہمیشہ اپنی زندگی میں مسلمانوں کو دعوت دین کا کام کرنے کی ترغیب دیتے رہے اور خود بھی اپنی آخری سانس تک فریضہ شہادت حق کو انجام دیتے رہے۔ وہ ایک علم دوست شخصیت کے مالک تھے۔ انکی کتاب کلکی اوتار نے کئی ایک لوگوں کے ذہنوں کو حق کی جانب موڑا ہے۔ مولاناکے بیانات انتہائی سادہ او ر لوگوں کو عمل کی جانب راغب کرنے والے ہواکرتے تھے۔اپنے بیانات میں اُن کا قوم و ملت کے لئے یہی پیغام تھا کہ ایک بن کر رہو‘ نیک بن کر رہو‘ فلاح پاؤ گے۔ اُنہوں نے اپنے پیچھے کئی ایک قابل شاگردوں کے علاوہ اپنے فرزند ڈاکٹر سراج الرحمن کو قابل جانشین کی حیثیت سے چھوڑا ہے۔جو اُن کے مشن کو جاری رکھیں گے۔امیر حلقہ نے کہا کہ ہمیشہ سے اُن کے جماعت اسلامی اور جماعت کے ذمہ داران کے ساتھ اچھے روابط رہے۔ امیر حلقہ مولانا حامد محمد خان نے اپنے دعایہ کلمات میں کہا کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور آپ کی رحلت سے جو خلاء پیدا ہوا ہے اِسے پورا کرے اور ملت اسلامیہ کو نعم البدل عطا فرمائے۔اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button