جنرل نیوز

پروفیسر بیگ احساس کے انتقال پر پروفیسر سید فضل اللہ مکرم کا تعزیتی بیان

 

حیدرآباد_ پروفیسر سید فضل اللہ مکرم  صدر شعبہ اردو ، یونیورسٹی آف حیدرآباد  نے پروفیسر بیگ احساس کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا۔اپنے تعزیتی بیان میں انھوں نے کہا کہ پروفیسر بیگ احساس اردو فکشن اور فکشن تنقید کا ایک اہم نام ہے ۔ ان کے انتقال پر ملال سے اردو دنیا ایک اہم ادبی شخصیت سے محروم ہوگئی ۔ انہوں نے جامعہ عثمانیہ اور یونیورسٹی آف حیدرآباد میں اردو طلبا کی ایک نئی کھیپ تیار کی ۔ انہوں نے کئی قومی اور بین الاقوامی سمینارز کا انعقاد عمل میں لایا اور خود بھی بیرونی ممالک کا دورہ کیا اور حیدرآباد کی نمائندگی کی۔ وہ ایک وضع دار اور سلجھی ہوئی شخصیت کے مالک تھے ۔ حیدرآبادی تہذیب و ثقافت کے ترجمان تھے ۔ وہ کئی ایک ادبی انجمنوں سے وابستہ تھے ۔ دھیمے لہجے میں پر اثر گفتگو کیا کرتے تھے ۔حیدرآباد میں مخدوم محی الدین کے بعد آپ کو ساہتیہ اکادمی کا ایوارڈ حاصل ہوا تھا۔ رسالہ سب رس کامیاب ادارت کی اور اپنے استاد پروفیسر مغنی تبسم کے صحیح جانشین ثابت ہوے۔ افسانوں کے تین مجموعے خوشہ گندم ، حنظل اور دخمہ اور دیگر تصانیف میں پی ایچ ڈی کا مقالہ کرشن چندر : فن اور شخصیت، شور جہاں اور شاذ تمکنت پر مونو گراف پروفیسر بیگ احساس کا اثاثہ ہیں  ۔ ان کی نگرانی میں کئی طلبا نے ایم فل اور پی ایچ ڈی کے مقالے تحریر کئے ۔ گزشتہ دنوں پروفیسر فاطمہ بیگم پروین کا بھی انتقال ہوگیا ۔اب شہر حیدرآباد بہترین اساتذہ سے محروم ہوتا جارہا ہے ۔ اللہ ان کے درجات کو بلند فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے ۔ آمین

 

متعلقہ خبریں

Back to top button