جنرل نیوز

سعادت حج سے لوٹنے والےزائرین حرم کی خدمت میں ۔۔۔۔۔۔۔ نئی زندگی کا آغاز   

رشحات قلم

عبدالقیوم شاکر القاسمی

جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء

ضلع نظام آباد تلنگانہ

9505057866

 

اولا

بارگاہ خداوندی میں کلمات تشکراداکرتے ہوے ہم شکرگذاربنیں کہ اس نے تمام تر سہولیات کے ساتھ اپنے مقدس اورروے زمین کا سب سے پہلا اپنا گھر کی زیارت اورکائنات کی سب سے مقدس ترین ذات گرامی سید الاولیین ولاخرین محمد عربی صلی اللہ علیہ وسلم کے روضہ مبارک کک حاضری سے مشرف فرمایا

اس دعاء کے ساتھ کہ پاک پروردگارہمارے اس سفر کومقبول سفربنادے اورزندگیوں میّ ایک دینی انقلاب کا ذریعہ اورنجات اخروی کا باعث بنادے

آمین

چونکہ اب پوری دنیامیں لوگ حج سے واپس ہورہے ہیں بادیدہ نم اللہ کے گھر اورروضہ رسول سے جدائ ودیگرمقامات مقدسہ سے فرقت اوردوری کاغم دلوں میں لئے ہوے رجعت کے لےء رخت سفرباندھے ہوے ہیں تو راقم آثم کے دل میں خیال آیا کہ کیوں نہ ان حجاج کرام کی خدمت میں چند باتیں جو ذکر کردی جاے جس سے آگے کی زندگی میں سہولت میسرآے اورایک نئ زندگی کا آغاز اچھے عزم وحوصلہ کے ساتھ کریں

دوران سفر ان سطروں کو تحریرکردیا ہوں اس نیت سے کہ باری تعالی مجھے بھی توفیق عمل دے دے اور میری زندگی میں بھی عمل آجاے۔۔۔۔

سب سے پہلے حجاج کرام کو یہ یاد رکھنا چاہیے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا

*کیوم ولدتہ امہ*

حاجی جب حج کرکے واپس آتا ہے تو وہ اس طرح ہوتا ہے جیسے ابھی ماں کے پیٹ سے پیداہواہوں جس کے نامہ اعمال کا دفتر باالکل کورے کاغذ کی طرح صاف وشفاف ہوتا ہے اسی طرح حج کی وجہ سے سابقہ تمام گناہ حاجی کے معاف ہوجاتے ہیں

*ان الحج یھدم ماکان قبلہ*

تو اب ہر حاجی کی ذمہ داری ہیکہ وہ اپنے اس مقام کو سمجھیں اوراسی کی روشنی میں اپنی ایک نئ زندگی کا آغاز کریں

احکامات الہی اوراطاعت واتباع رسول کولازمہ زندگی بنالیں ہر قسم کی معصیت اورگناہوں سے اپنی حفاظت کریں

حقوق اللہ میں اعمال کے اعتبار سے نماز ایک مہتم بالشان اورآسان عبادت ہے جس سے کبھی بھی غفلت نہ برتیں مردوخواتین سب کے سب پنچ وقتہ نمازوں کا اہتمام کریں نیز یہی وہ عبادت ہے جس کے بارہ روزمحشر سب سے پہلے سوال کیاجاے گا اگریہ اچھی نکل آی تو دیگر عبادات کے بارہ میں بہتری کی توقع کی جاسکتی ہے ورنہ اس عبادت میں کوتاہی دیگر اعمال پر اثر انداز ہوگی

اللہ تعالی نے جہاں اپنے حقوق بتلاے ہیں وہیں بندگان خدا کے بھی حقوق سے آگاہ کیا جس کی ادائیگی کے سلسلہ میں ہر مسلمان بطور خاص حجاج کرام اپنی ذمہ داری کو سمجھیں

اپنے رشتہ دار اعزاء واقرباء والدین اوربیوی بچوں کے ساتھ جس حسن سلوک کی تاکید کی گیء ہے ہر حاجی کو اس کا خاص اہتمام کرناچاہیے کہ کسی بھی قسم کی کوی حق تلفی ہم سے نہ ہونے ہاے

ادائیگی حقوق کے حوالہ سے انتہای شفافیت کے معاملہ

تجارت وکاروبار میں حق وحلال امانت ودیانت کا لحاظ رکھیں

پڑوسیوں کے حقوق کی رعایت کریں ہماری جانب سے کوی بھی انسان کو اذیت نہ ہونے دیں کسی کا دل نہ ٹوٹے

ان سب سے ہٹ کر حجاج کرام کو چاہیے کہ وہ جہاں اپنے لےء بارگاہ خداوندی میں دست بہ دعاء ہوں وہیں پوری انسانیت خصوصا ملت اسلامیہ اورعالم اسلام کے مسلمانوں کے لےء خیر اوربھلای کی دعاء مانگتے رہیں حتی الامکان اپنی ہر دعاء میں سب کو شامل رکھیں

حضورعلیہ السلام نے ارشاد فرمایا کہ جس کسی حاجی سے ملاقات کرو تو اس کو سلام کرو اس سے مصافحہ کرو اورقبل اس کے کہ وہ اپنے گھر میں داخل ہواس سے اپنے لےء دعاے مغفرت کروالو چونکہ وہ پاک وصاف ہوکر آے ہیں

ایک روایت میں آتا ہیکہ اللہ تعالی حاجی کی بھی مغفرت فرماتے ہیں اورحاجی جس کے لےء مغفرت کی دعاء کریں اس کی بھی مغفرت فرمادیتے ہیں

اسی طرح ایک اورروایت میں آتا ہیکہ حاجی 20/ ربیع الاول تک جس کی بھی مغفرت کی دعاکرتا ہے اس کی مغفرت فرمادی جاتی ہے

اس لےء ہر حاجی کو چاہیے کہ وہ اپنے ساتھ ساتھ اوروں کو بھی جوڑلیں اور سب انسانوں کی ہدایت ومغفرت کے لےء دعاؤں کا اہتمام کریں

متعلقہ خبریں

Back to top button