بابری مسجد شہادت سپریم کورٹ نے دیا اڈوانی کو جھٹکا

دہلی۔6 مارچ ( اردو لیکس)  سپریم کورٹ نے واضح کیا کہ بابری مسجد کی شہادت کے مقدمہ میں بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی اوردیگر ملزمین کے خلاف عائد الزامات کوتکنیکی وجوہات ہٹایا نہیں جا سکتا. زیریں عدالت میں سماعت کے دوران سال 2001 میں ان قائدین  پر عائد الزامات کو ہٹا دیا گیا تھا۔کورٹ نے پہلے بھی کئی بار یہ سوال اٹھایا تھا کہ اس معاملے میں سازش کے الزام اڈوانی، مرلی منوہر جوشی، اوما بھارتی اور کلیان سنگھ پر پھر سے کیوں نہیں لگائے جا رہے۔ زیریں  عدالت نے ان تمام پر لگے الزامات مسترد کئے تھے اور اسی کے حکم کو 2010 میں الہ آباد ہائی کورٹ نے برقرار رکھا تھا. اس معاملے میں سی بی آئی نے 9 ماہ بعد اپیل کی تھی۔ قبل ازیں بھی اڈوانی نے الزامات ہٹانے کی درخواست داخل کی تھی تاہم عدالت نے ان کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ تکنیکی بنا پر الزامات نہیں ہٹائے جاسکتے۔