عائشہ میراں قتل واقعہ ہائی کورٹ کا چونکا دینے والا فیصلہ

حیدرآباد۔31 مارچ ( اردولیکس) ہائیکورٹ نے عائشہ میراں قتل واقعہ کے معاملہ میں چونکا دینے والا فیصلہ سنایا ہے۔ پولیس نے اس کیس میں ستیم بابو کو اصل ملزم بنایا تھا عدالت نے اسے بے قصور قرار دیا اور اسے ایک لاکھ روپئے ایکس گریشا ادا کرنے کی ہدایت دی۔ عدالت نے کہا کہ ملزم کےخلاف مناسب شواہد نہیں ہیں۔ واضح رہے کہ گنٹور سے تعلق رکھنے والی فارماسی کی 23 سالہ طالبہ وجئے واڑہ کے ایک ہاسٹل میں رہتے ہوئے تعلیم حاصل کررہی تھی۔ 26 ڈسمبر سال 2007 کو طالبہ کا اجتماعی عصمت ریزی کے بعد قتل کردیا گیا تھا۔ اس معاملہ میں پولیس نے ستیم بابو کے خلاف مقدمہ درج کر کے اسے عدالت میں پیش کیا تھا۔ وجئے واڑہ سیشنس کورٹ نے ستیم بابو کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔ عدالت نے اسے جیل میں رکھنے پر ایکس گریشا ادا کرنے کی ہدایت دی ساتھ ہی ساتھ یہ بھی کہا کہ ستیم بابو کو 8 سال تک جیل میں رکھنے والے ملازمین پولیس کے خلاف کاروائی کی جائے۔