بین الاقوامی تعاون سے دھشت گردی کامقابلہ کرنے نایب صدر کا مشورہ

نائب صدر جمہوریہ جناب ایم حامد انصاری نے کہا ہے کہ باہمی کوششوں سمیت بین الاقوامی تعاون کے دہشت گردی کا مقابلہ کرنا چاہیے ۔ مراکش اور تیونس کا پانچ روزہ دورہ مکمل کر کےوہ آج تیونس سے ہندوستان لوٹتے ہوئے ایر انڈیا کے طیارے میں میڈیا کے وفد سے بات چیت کر رہے تھے ۔ نائب صدر جمہوریہ نے کہا کہ مراکش اور تیونس کا دورہ بہت ہی بارآور رہا اور دہشت گردی سمیت متعدد مسائل پر دونوں ممالک کے ساتھ بات چیت بہت ہی خوشگوار رہی ۔

تیونس دورے کے بارے میں انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں نے تعلقات بہتر بنانے اور شناخت کئے گئے شعبوں پر توجہ مرکوز کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ ان امور پر مشترکہ کمیشن میں مزید توجہ مرکوز کی جائے گی جب تیونس کے وزیر خارجہ اس سال ہندوستان کا دورہ کریں گے ۔ نائب صدر جمہوریہ نے مزید کہا کہ سیاسی طور پر کوئی دشواری نہیں ہے کیونکہ وہ لوگ بین الاقوامی فورم پر بہت ہی معاون رہے ہیں۔

نائب صدر جمہوریہ نے کہا کہ دونوں ملک دہشت گردی سے بری طرح متاثر ہیں اور اس بات پر راضی ہیں کہ باہمی مذاکرات سمیت بین الاقوامی تعاون کے ذریعہ اس لعنت کا مقابلہ کرنا چاہیے ۔

نائب صدر جمہوریہ نے کہا کہ دورے کے دوران تجارت اور ٹکنالوجی پر بھی توجہ مرکوز کی گئی اور مراکش اور تیونس کے ذریعہ افریقہ میں ہمارے کچھ نئے اقدامات کو مقبولیت حاصل ہوئی ہےاورچند مخصوص سہ فریقی معاہدے عمل میں آئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ مجموعی طور پر ان کا بہت ہی دوستانہ انداز میں والہانہ استقبال کیا گیا ۔