کورونا کے بحران میں 3 کروڑ سے زائد ملازمین نے پی ایف رقم واپس لے لی

نئی دہلی _ ہندوستان میں کورونا بحران سے زیادہ تر خانگی شعبے میں کام کرنے والے ملازمین پریشان ہوئے ہیں۔ ایمپلائز پروویڈنٹ فنڈ آرگنائزیشن (ای پی ایف او) کے نصف سے زیادہ ملازمین نے کورونا بحران کے دوران پی ایف اکاؤنٹس سے رقم واپس لے لی ہے ۔ پچھلے سال یکم اپریل سے لے کر اس سال مئی تک ، پی ایف کے 3 کروڑ 50 لاکھ صارفین اپنے اکاؤنٹ سے رقم وتھ ڈرا کروائی ہے ۔ ان میں سے  تقریبا 72 لاکھ ملازمین ‘کورونا ایڈوانس’ آپشن کے تحت رقم واپس لے لی ہے   ای پی ایف او کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ 18،500 کروڑ روپئے رقم کورونا ایڈوانس کے نام پر واپس لی گئی ہے ۔ اس وقت ای پی ایف او کے صارفین کی تعداد 6 کروڑ کے لگ بھگ ہے۔ ان میں وتھ ڈرا، پنشن ، ڈیتھ انشورنس اور پی ایف ٹرانسفر سمیت ، مذکورہ بالا ساڑھے تین کروڑ صارفین نے  1.25 لاکھ کروڑ روپے کی رقم واپس لے لی ہے ۔ 

ہر سال پی ایف کی واپسی میں 10 فیصد کا  اضافہ ہوا ہے۔ ریٹائرڈ ملازمین اور   ملازمت کے ٹرانسفر کی وجہ سے اپنا پی ایف رقم نکالنا چاہتے ہیں ۔ لیکن ، اس بار کورونا بحران کی وجہ سے اوسط سے زیادہ پی ایف کی واپسی ہوئی ہے۔ تجزیہ کاروں نے پیش گوئی کی ہے کہ کورونا بحران سے ملازمت سے محروم ہونے والے افراد اخراجات کے لئے پی ایف کی رقم واپس لے رہے ہیں ۔ ای پی ایف او ڈیٹا کے مطابق ، زیادہ تر دعوے ممبئی ، پونے ، دہلی اور بنگلور سے موصول ہوئے ہیں۔ ای پی ایف او نے درخواستوں کو خودکار انداز میں جمع کروائے جانے کے 72 گھنٹوں کے اندر ان دعوؤں کو طے کرلیا ہے یہ فیصلہ موجودہ حالات میں ملازمین پر مالی بوجھ کم کرنے کے لئے کیا گیا تھا۔ حکومت نے گذشتہ سال ملازمین کو اپنے پی ایف اکاؤنٹ کا 75 فیصد یا تین ماہ کی بنیادی تنخواہ واپس لینے کی اجازت دی تھی۔