جرائم و حادثات

نظام آباد میں 19 سالہ لڑکے نے تین افراد کا بے دردی سے قتل کردیا

نظام آباد میں 19 سالہ لڑکے نے تین افراد کا بے دردی سے قتل کردیا 

نظام آباد _ 13 دسمبر ( اردو لیکس ) تلنگانہ کے نظام آباد ضلع میں ایک 19 سالہ لڑکے نے شراب پینے پیسے نہ ملنے پر 3 افراد کا انتہائی بے دردی سے قتل کردیا اور ان کے پاس سے 2800 روپے اور دو سیل فون چوری کرکے فرار ہوگیا۔ تاہم پولیس نے قاتل کو چوری کے فون کے استعمال پر اسے ٹکنالوجی کے ذریعہ پکڑ لیا۔قتل کی یہ واردات نظام آباد ضلع کے ڈچ پلی میں 7 دسمبر کی آدھی رات کو پیش آئی تھی

 

نظام آباد کے کمشنر پولیس کارتھیکیہ نے  ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ تین افراد کے بے ہیمانہ قتل کا  ملزم  19 سالہ سریکانت تھا جس نے شراب کے نشے میں نقد رقم کے لیے قتل کیا  تھا۔اس نے  ہرپال سنگھ، جوگندر سنگھ اور سنیل کا ڈچپلی میں مین روڈ کے پاس ہارویسٹر شیڈ میں ان تینوں کا بے دردی سے قتل کر دیا تھا،۔ تحقیقات میں قاتل 19 سالہ گندھم سریکانت کی شناخت کی گئی ہے جو قلعہ چوراستہ، نظام آباد کا ساکن ہے۔ سری کانت، جو 15 سال کی عمر سے چوری کا عادی تھا۔

 

7 دسمبر کی آدھی رات کو  نقد رقم کے لیے شراب کے نشے میں شیڈ میں گیا۔ سنیل جو پہلے باہر بستر پر سو رہا تھا، اس کے سر میں ہتھوڑے سے وار کیا اور اس کی موت ہوگئی۔ بعد ازاں سریکانت شیڈ میں داخل ہوا وہاں رکھی شراب کی بوتل لے کر اس نے شراب پی ۔ اس کے بعد ہرپال سنگھ اور  جوگندر سنگھ پر ہتھوڑے سے حملہ کر کے ان دونوں کو ہلاک کر دیا۔ اس کے بعد اس نے ان کا سیل فون اور 2,800 روپے نقد چرا لیے۔ کمشنر پولیس نے بتایا کہ سریکانت کو کسی مزاحمت کا سامنا نہیں کرنا پڑا کیونکہ یہ  تینوں متاثرین شراب پی کر سو رہے تھے۔

 

سم کو چوری کے سیل فون میں ڈالنے سے قاتل پکڑا گیا ۔

ملزم نے موبائل فونز سے سم نکالیں اور پھر اپنا سم کارڈ ایک فون میں ڈال دیا۔ پولیس کو تکنیکی شواہد ملے ہیں کہ قتل ہونے والے شخص کے سیل میں کسی اور نے سم ڈالی تھی۔ ملزم نے دوران تفتیش قتل کا خود اعتراف کرلیا۔ پولیس نے متوفی کے موبائل فون اور کچھ نقد رقم ضبط کر لی۔ سری کانت، جسے 2018 میں چوری کے ایک معاملے میں گرفتار کیا گیا تھا۔ اطلاعات کے مطابق اس کی ایک ماہ قبل محبت کی شادی ہوئی تھی

متعلقہ خبریں

Back to top button