ایودھیا میں درگا پوجا کے دوران فائرنگ _ ایک ہلاک دو زخمی

لکھنو _  اتر پردیش کے ایودھیا میں درگا پوجا کے دوران جاگرن میں فائرنگ کے واقعہ نے سنسنی مچا دی۔ میڈیا اطلاعات کے مطابق فائرنگ کے اس واقعہ کو چار نوجوانوں نے انجام دیا ہے۔ اس حملے میں ایک  شخص ہلاک ہو گیا ہے جبکہ دو کمسن لڑکیاں زخمی ہیں۔ اسی دوران موقع پر موجود لوگوں نے فائرنگ کرنے والے ایک نوجوان کو پکڑ لیا جبکہ اس کے 3 ساتھی فرار ہو گئے ہیں۔ یہ واقعہ کوتوالی نگر کے کارخانہ نیل گودام کے قریب پیش آیا۔  حملے میں زخمی ہونے والی دونوں لڑکیاں ضلع ہاسپیٹل میں زیر علاج ہیں۔

واقعہ کی اطلاع کے بعد پولیس کے اعلیٰ عہدیدار موقع پر پہنچ گئے اور تحقیقات شروع کردی۔ فائرنگ سے زخمی ہونے والی دونوں لڑکیوں کو نازک حالت میں لکھنؤ ٹراما سینٹر رجوع کیا گیا ہے۔ ایس ایس پی شیلیش پانڈے نے معاملے کی تحقیقات کے لیے 4 ٹیمیں تشکیل دی ہیں۔ پولیس وہاں سے پکڑے گئے ایک حملہ آور سے پوچھ تاچھ کر رہی ہے۔ پولیس نے حملہ آوروں کی گاڑیاں بھی برآمد کر لی ہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ تینوں حملہ آور گاڑیوں کو چھوڑ کر فرار ہو گئے ہیں۔

ایس ایس پی شیلیش پانڈے نے بتایا کہ فائرنگ کا درگا پوجا سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ یہ واقعہ پنڈال سے دور گھر کے باہر پیش آیا۔  یہ آپسی مخاصمت  کا معاملہ لگتا ہے۔ اسی نقطہ نظر  سے تحقیقات جاری ہے۔ موقع سے پانچ گاڑیاں برآمد ہوئی ہیں۔ پانچوں گاڑیوں کی شناخت کی جا رہی ہے۔

اس واقعہ پر ایس پی لیڈر اور سابق وزیر  پون پانڈے ، جو ضلع ہاسپیٹل پہنچ کر زخمیوں کی عیادت کی نے کہا کہ ایودھیا-فیض آباد درگا پوجا منا رہا ہے  اور مجرم فائرنگ کر رہے ہیں۔ پون پانڈے نے ریاست میں امن و امان کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی حکومت میں مجرموں کے حوصلے بڑھ رہے  ہیں۔ انہوں نے مرنے والے کے لواحقین کو ایک کروڑ روپے معاوضہ دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ اور  دونوں لڑکیوں کے مناسب علاج کے انتظامات کیے جائیں۔  حملہ آوروں کو جلد گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا ۔