عادل آباد میں نقلی آئی ایف ایس آفیسر گرفتار

عادل آباد _ عادل آباد ضلع پولیس نے نقلی آئی ایف ایس آفیسر کو بے نقاب کرتے ہوئے اس کے قبضے سے 3لاکھ روپے نقد رقم، 50 ہزار مالیت کے کمپیوٹر، پرنٹر، فرضی جاب لیٹر اور دو سیل فون ضبط کرلئے۔ جس نے اپنے آپ کو آئی ایف ایس آفیسر قرار دیتے ہوئے معصوم افراد سے محکمہ جنگلات میں ملازمت دلانے کا وعدہ کرتے ہوئے 8 لاکھ روپے کی رقم بٹوری تھی ۔ضلع ایس پی عادل آباد راجیش چندرا نے گوڈی ہتنور پولیس اسٹیشن میں دھوکہ دہی کے الزام میں دو ملزمان کو گرفتار کرتے ہوئے میڈیا کے سامنے پیش کیا۔راجیش چندرا نے کہا کہ گڈی ہتنور منڈل کے سوپان متنور گاوں کا 29 سالہ موہن ڈگری تک تعلیم حاصل کی اور حیدرآباد میں ایک پلاسٹک کمپنی میں ملازمت کرتا تھا اس نے نرمل ضلع کے 42 سالہ نرسیا کے ساتھ مل کر آسانی سے دولت کمانے کے لئے نقلی آئی ایف ایس آفیسر بن گیا۔کار کرایہ پر حاصل کرتے ہوئے یہ دونوں سوٹ بوٹ پہن کر گوڈی ہتنور، اندرویلی کے 7 بے روزگار نوجوانوں سے رقم حاصل کی اور انھیں جعلی اپائںٹمنٹ لیٹر حوالے کردیا۔جس پر یہ افراد محکمہ جنگلات میں ڈیوٹی پر مامور ہونے اپائںٹمنٹ لیٹر پیش کیا۔جسے جعلی قرار دیا گیا۔ان افراد کی شکایت پر پولیس نے دونوں کو گرفتار کرلیا