جنرل نیوز

محبوب نگر میں وقف اراضی کے تحفظ کا مطالبہ ۔ خواجہ فیاض الدین انور پاشاہ کی پریس کانفرنس

حیدرآباد: خواجہ فیاض الدین انور پاشاہ رکن وقف تحفظ و رابطہ کمیٹی محبوب نگر نے آج صحافیوں سے بات کرے ہوئے کہا کہ محبوب نگر میں وقف رحمانیہ کی مکمل وقف جائیداد مختلف سروے نمبرات میں چھ سو چھبیس ایکڑ پر مشتمل ہے اور محبوب نگر منڈل کی حدود میں واقع یے اس اراضی پر مختلف اوقات میں مختلف لینڈ گرابرس نے ان اوقافی جائدادوں پر قبضہ کی کوشش کی۔

اسی ضمن میں ایک مقدمہ 686/2006 ہائی کورٹ تلنگانہ میں زیر التواء ہے باوجود اس کے کچھ لینڈ گرابرس نے سروے 994,1053,943,944,341 میں نا جائز طور پر وقف اراضی کو پلاٹس کی شکل میں فروخت کرنے کی کوشش کی . انہوں نے بتایا کہ جیسے ہی اس بات کی اطلاع انہیں موصول ہوئی انورپاشاہ نے مذکورہ سروے نمبرات کا فوری معائنہ کیا اور اس کے متعلق ضلع کلکٹر محبوب نگر ایس وینکٹ راؤ اور مقامی ریاستی وزیر ڈاکٹر وی سرینواس گوڑ سے نمایندگی کرتے ہوئے لینڈ گرابرس کے خلاف سخت کاروائی کا مطالبہ کیا . انور پاشاہ نے بتایا کہ وزیر موصوف نے فوری اڈیشنل کلکٹر کو اس خصوص میں کاروائی کی ہدایت دی . اور ضلع کلکٹر نے بھی جائنٹ کلکٹر کو اس اراضی کا معائنہ کرنے اور سروے کرواتے ہوئے حد بندی کرنے کی ہدایت دی . خواجہ فیاض الدین انور پاشاہ نے مزید کہا کہ ہائی کوٹ میں زیر سماعت مذکورہ بالا مقدمہ کی یکسوئی کیلئے ریاستی وقف بورڈ عدم سنجیدگی کا مظاہرہ کر رہا ہے . بارہا نمایندگی کے باوجود وقف بورڈ نے اب تک مقدمہ میں پیروی کیلئے وکیل کو بھی کھڑا نہیں کیا ہے اگر وقف بورڈ کا یہی رویہ رہاتو کم و بیش ایک ہزار کروڑ کی یہ اراضی ہاتھ سے نکل سکتی ہے . انور پاشاہ نے مزید کہا کہ اندرون ایک ہفتہ اگر وقف بورڈ کوئی اقدام نہیں کرتا ہے تو مجبورا وقف بورڈ کے خلاف محبوب نگر میں ایک عوامی تحریک شروع کردینگے ۔

انہوں نے نو نامزد چیرمین ریاستی وقف بورڈ محمد مسیح اللہ کو محبوب نگر آنے اور ان اراضیا ت کا معائنہ کرنے کی دعوت بھی دی۔ انور پاشاہ نے بتایاکہ جہاں حکومت اور سرکاری عہدیدار اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کیلئے سنجیدہ وہیں ریاستی وقف بورڈ کی خاموشی اور عدم سنجیدگی معنی خیز ہے .

متعلقہ خبریں

Back to top button