ایسے افراد کو کوویگزین ویکسین کا صرف ایک ڈوز کافی ہے!

حیدرآباد _ انڈین کونسل فار میڈیکل اینڈ ریسرچ ( آئی سی ایم آر) کی ایک تحقیق میں اس بات کا پتہ چلا ہے کہ  کورونا انفیکشن سے صحت یاب ہونے والے افراد کے لیے کوویگزین ویکسین کی ایک ڈوز کافی ہے۔  کورونا وائرس سے صحت یاب ہوکر کوویگزین کا ایک ڈوز لینے والے لوگوں میں اتنی اینٹی باڈیز ہوتی ہیں جو کوویگزین کی دو خوراکیں لینے سے آتی ہیں۔
اس تحقیق کے نتائج ہفتہ کو انڈین جرنل آف میڈیکل ریسرچ میں شائع ہوئے۔  تحقیق کے مطابق جو لوگ پہلے ہی کورونا وائرس سے متاثر ہوئے ہیں انہیں BBV152 (Covaxin) ویکسین کی ایک خوراک دی جاتی ہے۔جس سے قابل لحاظ تعداد میں اینٹی باڈیز پیدا ہوتے ہیں ۔
یہ تحقیق ہیلتھ ورکرس، فرنٹ لائن ورکرس پر کیا گیا۔ اسی کے ایک حصے کے طور پر ، SARS-CoV-2 کے اینٹی باڈیز کو 28 ویں دن (ویکسین سے پہلے) اور کوویگزین کی پہلی خوراک لینے کے بعد 28 ویں اور 56 ویں دن ٹیسٹ کیا گیا۔ اس کے لیے 114 خون کے نمونے لیے گئے۔ یہ سب کورونا کے مریض تھے جو صحت یاب ہوگئے ۔ انہوں نے رواں سال فروری سے وسط مئی تک چنائی میں کوویگزین ویکسین بھی لی۔

ان میں سے دو ورکرس کو  چھوڑ کر باقی تمام میں کوویگزین کی ایک خوراک لینے کے بعد اینٹی باڈیز کی نمو بہت زیادہ تھی۔ آئی سی ایم آر کے مطالعے سے پتہ چلا ہے کہ کورونا انفیکشن والے تمام افراد جنھوں نے کوویگزین کی دو ڈوز اور  ایک ڈوز لئے ہیں ان تمام میں ایک جیسی تعداد میں اینٹی باڈیز ہوتی ہیں