انٹر نیشنل

کووڈ سے محفوظ رہنے گولی۔ اومیکرون کے خلاف بھی موثر

نئی دہلی: یورپی یونین ڈرگ ریگولیٹر نے فائزرکمپنی کی کورونا کی گولی کے ہنگامی استعمال کو منظوری دے دی ہے۔ فائزر کی کورونا کی گولی کو اومیکرون سے مقابلہ کے لئے گزشتہ روز استعمال کرنے کی منظوری فراہم کی گئی ہے۔ فی الحال اس گولی کے استعمال کو باضابطہ طور پر منظوری نہیں دی گئی ہے جبکہ اسے ہنگامی طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔

امریکی فارما کمپنی فائزر کا کہنا ہے کہ یہ دوا اومیکرون ویرینٹ سے نمٹنے کے لیے ایک نئے طرح کا علاج ہے۔ کمپنی کا دعویٰ ہے کہ اس دوا کے ذریعے مریضوں میں ہاسپٹل میں داخل ہونے اور موت کے خطرے کو تقریباً 90 فیصد تک کم کیا جا سکتا ہے۔ یورپی میڈیسن ایجنسی (ای ایم اے) نے کہا ہے کہ فائزر کی گولی ابھی تک یورپی یونین میں منظور شدہ نہیں ہے لیکن اسے کورونا کے ایسے بالغ مریضوں کے علاج کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے جنہیں اضافی آکسیجن کی ضرورت نہیں ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق فائزر کی اس دوا کے کچھ مضر اثرات بھی ہو سکتے ہیں جیسے کہ ذائقہ میں کمی یا قئے کا احساس ہونا وغیرہ شامل ہیں۔ اس گولی کے بارے میں کہا گیا ہے کہ حاملہ خواتین کو اس کا استعمال نہیں کرنا چاہیے اور اسے لیتے وقت دودھ پلانا بند کر دینا چاہیے۔ تاہم، ہنگامی استعمال کی منظوری حاصل ہونے کے بعد بہت سے مریضوں کی موت کے خطرے کو کم کیا جا سکتا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button