ہندوستان میں تیسری کورونا ویکسین _ روس میں تیار کردہ اسپوتنک ویکسین حیدرآباد پہنچ گئی

حیدرآباد _ ہندوستان میں ایک اور کورونا ویکسین جلد ہی  دستیاب ہوگی۔ روس میں تیار کردہ اسپوتنک -وی  ویکسین ماسکو سے خصوصی طیارے کے ذریعے آج حیدرآباد پہنچی۔ پہلی قسط کے حصے کے طور پر ، ہندوستان میں 1.5 لاکھ ویکسین موصول ہوئے۔ یہ سب سے پہلے  حیدرآباد کی فارما کمپنی ڈاکٹر ریڈی کی لیب میں منتقل کیے جائیں گے ، جس نے  ہندوستان میں اسپوٹنک –  ویکسن کے  کلینیکل ٹرائلز کا انعقاد کیا ہے ۔مئی کے ختم تک مزید 30 لاکھ  خوراک ہندوستان پہنچیں گی ، جون میں 50 لاکھ اور جولائی میں مزید ایک کروڑ ویکسین ڈوز حیدرآباد پہنچے گی۔

گالمالیہ انسٹی ٹیوٹ نے روسی براہ راست سرمایہ کاری فنڈ  کے اشتراک سے تیار کردہ  اسپوتنک ویکسین کو بھارت میں پیداوار اور تقسیم کے لئے گذشتہ سال ستمبر میں حیدرآباد کی ڈاکٹر ریڈی کے ساتھ معاہدہ کیا تھا۔ اس کے ایک حصے کے طور پر .. دوسرے اور تیسرے مرحلے کے کلینیکل ٹرائلز کرنے والے ڈاکٹر ریڈی لیاب کو ہندوستان میں ہنگامی استعمال کے لئے  12 اپریل کو ڈی سی جی آئی سے منظوری دی تھی ۔ یہ بھارت میں منظور شدہ تیسری ویکسین ہے۔ اس سے قبل ہندوستان میں دو کمپنیوں کو ویکسین سربراہ کرنے کی اجازت دی گئی ہے جن میں حیدرآباد کی بھارت بائیوٹیک اور پونے سیرم انڈیا انسٹی ٹیوٹ شامل ہے

جنوری 26 سے ملک میں سیرم انڈیا کی جانب سے تیار کردہ کووی شیلڈ ویکسین کو اجازت دی گئی تھی اس کے چند بعد حیدرآباد کی بھارت بائیوٹیک کمپنی کی طرف سے تیار کردہ کوویگزین ویکسین کو استعمال کی اجازت دی گئی ہے فی الحال ملک بھر میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے بڑے پیمانے پر ٹیکے دیئے جا رہے ہیں ان میں کووی شیلڈ اور کوویگزین ٹیکہ دیا جا رہا ہے اب روس کی تیار کردہ اسپوتنک ویکسین بھی بہت جلد ہندوستان میں ٹیکے کے لئے دی جائے گی۔