سری لنکا میں برقعہ پر پابندی _ قومی کابینہ میں تجویز منظور

نئی دہلی _ سری لنکا کی حکومت نے قومی سلامتی کے لئے  عوامی مقامات پر برقعہ پہننے پر پابندی عائد کردی ہے تاہم ،  واضح کیا کہ ماسک سختی کےساتھاستعمالکیاجائے ، لیکن برقعہ نہیں۔ سری لنکا کی کابینہ نے منگل کے روز  برقع پہننے پر پابندی کے ایک بل کی منظوری دے دی۔ یہ بل سری لنکن پارلیمنٹ میں منظور ہوتے ہی نافذ ہوجائے گا۔

کابینہ نے کہا کہ یہ فیصلہ سال 2019 میں ایسٹر کے دوران چرچوں اور ہوٹلوں پر برقعے پہننے والے دہشت گرد حملوں کے تناظر میں قومی سلامتی کے مفاد میں لیا گیا تھا۔ پاکستان ہائی کمشنر نے سری لنکا میں  برقعہ پہننے پر پابندی کی شدید مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ فیصلہ مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے اور قومی سلامتی کے حوالے سے تفرقہ انگیز اقدامات اٹھانے کے لئے لیا گیا ہے۔ یہ الزام ہے کہ سری لنکا میں مسلمانوں کے بنیادی حقوق پامال کیے جارہے ہیں۔

ایسٹر ڈے 2019 کے موقع پر گرجا گھروں اور ہوٹلوں میں برقعے پہنے ہوئے قومی توحید جماعت خود کش دستے کے  حملوں سے  27 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ ہلاک ہونے والوں میں گیارہ ہندوستانی بھی شامل ہیں۔ ان حملوں میں 500 سے زیادہ افراد زخمی ہوئے تھے۔