ہندوستان کے ساتھ تعلقات پر طالبان کا اہم بیان

حیدرآباد _ طالبان نے افغانستان پر قبضہ کرنے کے بعد ہندوستان کے ساتھ تعلقات پر اہم بیان دیا ہے  طالبان کے اہم لیڈر شیر محمد عباس ستانکزئی نے کہا ہے کہ وہ ہندوستان کے ساتھ سیاسی ، تجارتی اور ثقافتی تعلقات برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے ہندوستان کو ان کے لیے ایک اہم ملک قرار دیا۔ شیر محمد نے طالبان کے سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر ایک ویڈیو شیئر کی۔

 

افغانستان پر قبضہ کرنے کے بعد یہ پہلا موقع ہے جب طالبان لیڈر نے ہندوستان  کے ساتھ تعلقات پر ردعمل ظاہر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مختلف گروہ اور سیاسی جماعتیں کابل میں حکومت بنانے کی منصوبہ بندی کر رہی ہیں۔ تقریبا 46  منٹ کی ویڈیو میں کئی اہم نکات کا تذکرہ کیا  ، جس میں “مختلف برادریوں” کے لوگوں کی نمائندگی شامل ہے۔ شریعت پر مبنی اسلامی حکومت کے قیام کا اعلان کیا۔

عباس نے ہندوستان ، پاکستان ، چین اور روس سمیت مختلف ممالک کے ساتھ تعلقات کا بھی جواب دیا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کے  ساتھ پاکستان کے ذریعے تجارت بہت اہم ہے۔ اس کے علاوہ ، ایران کے بارے میں بات کرتے ہوئے شیر محمد عباس نے یاد دلایا کہ ہندوستان نے افغانستان میں چمبہار بندرگاہ تیار کی تھی۔

شیر محمد غیر ملکی آئی پی ایس کیڈٹس کے ایک گروپ میں شامل تھے جو 1980  کے اوائل میں دہرادون کی معروف انڈین ملٹری اکیڈمی میں تربیت حاصل کی تھی ۔ اس کے بعد میں شیر محمد افغان فوج کو چھوڑ کر طالبان میں شامل ہوگئے تھے