مسلم خواتین نے لاوارث خاتون کی تدفین عمل میں لائی

ورنگل _ عام طور پر مسلمان مرد ہو یا عورت کی موت پر ان کی تدفین مرد حضرات ہی کرتے ہیں۔ لیکن تلنگانہ کے ورنگل ضلع میں ایک عجیب وغریب واقعہ پیش آیا جس میں چند خواتین نے مل کر ایک عورت کی میت کی تدفین عمل میں لائی۔تفصیلات کے مطابق ورنگل اربن ضلع ، قاضی پیٹ کے پرشانت نگر میں واقع سہرودیا یتیم خانے میں ایک لاوارث مسلم خاتون کی موت ہوگئی۔بتایا جاتا ہے کہ مہاراشٹر سے تعلق رکھنے والی 70 سالہ زولیخہ چند دن قبل قاضی پیٹ کے ریلوے اسٹیشن کے پاس مشتبہ حالت میں پائی گئی۔ مقامی پولیس اسٹیشن کے سرکل انسپکٹر نریندر نے اس خاتون کی تفصیلات معلوم کرنے کے بعد اسے قاضی پیٹ کے یتیم خانے میں منتقل کروادیا۔یہ یتیم خانہ یعقوب بی نامی خاتون چلاتی ہے ۔ معمر خاتون کا یتیم خانہ میں علاج کروایا گیا تاہم علاج کے دوران وہ انتقال کر گئیں۔لاوارث خاتون کی تدفین کے لئے کوئی بھی آگے نہیں آرہے تھے جس پر یتیم خانہ کی منتظمہ یعقوب بی نے چند مسلم خواتین کی مدد سے اس کی مسلم روایت کے مطابق تدفین عمل میں لائی۔ اس پر بہت سے لوگوں نے یعقوب کو مبارکباد پیش کی۔ ایک مقامی اخبار کی اطلاع کے مطابق چار برقعہ پوش خواتین نے لاوارث میت کو کاندھا دیتے ہوئے اسے قبرستان تک لایا۔ اور تدفین عمل میں لائی۔

یعقوب بی نے اپنے یتیم خانے میں ایک ہندو شخص کی  موت پر آخری رسومات انجام دی  تھی   ویراسوامی اورشوبھا لاولد تھے ۔ وہ دونوں یتیم خانہ میں رہتے تھے اس دوران  ویرا سوامی کی قلب پرحملہ سے موت ہوگئی۔ جس  پریعقوب بی  نے ہندورسم ورواج کے مطابق اس شخص کی آخری رسومات انجام دی تھی ۔ یعقوب بی کے یتیم خانے میں ہندو مسلم اور دیگر طبقات کے لوگ رہتے ہیں