مولانا جعفر پاشاہ صاحب کے ساتھ پولیس کا نارواسلوک قابل مذمت _ مفتی محمد یونس القاسمی صدر جمعیۃ علماء کریم نگر

 کریم نگر _  گزشتہ چند دنوں سے لاک ڈاؤن میں عوام اور راہ گیروں کے ساتھ پولیس کی زیادتی اور تشدد والی خبریں پیش آرہی ہیں ۔اپنے کاروبار سے گھروں کو واپس ہونے والوں کے ساتھ وقت کے اندر ہی غیر ضروری زیادتی کی جارہی ہے ۔اسی درمیان یہ افسوس ناک اور قابل مذمت واقعہ پیش آیا کہ ریاست کی مؤقر ومحترم شخصیت مولانا حسام الدین جعفر پاشاہ صاحب کہیں سے گھر واپس ہورہے تھے اور لاک ڈاؤن تحدیدات کے لئے وقت بھی باقی تھا کہ پولیس نے انھیں روک لیااور ایک پولیس اہلکار نے ان کے ساتھ نازیبا گفتگو کی ،اورغیر اخلاقی برتاؤ کیا۔
پولیس کی جانب سے ریاست کی معتبر اور مذہبی شخصیات کے
ساتھ اس طرح کا برتاؤ اور غلط سلوک پولیس کی زیادتی اور عوام کو بدظن کرنے والی نامناسب حرکت ہے۔مولانا حسام الدین جعفر پاشاہ صاحب آل انڈیا مسلم پرسنل لابورڈ کے رکن، امیر ملت اسلامیہ تلنگانہ وآندھراپردیش ،جنوب ہند کی عظیم دینی درس گاہ جامعہ اسلامیہ دارالعلوم حیدرآباد کے مہتمم اور بہت ساری تنظیموں کے ذمہ دار وسرپرست ہیں۔ریاست کے مقبول خطباء میں آپ شمار ہوتے ہیں، آپ کے بیانات حق وانصاف کے لئے ،مظلوموں کے حق میں صدائے انقلاب سمجھے جاتے ہیں ،آپ اپنے بیانات سے اچھے اخلاق کی تعلیم دیتے ہیں اور ظلم وزیادتی ،ناانصافی وجانب داری سے بچنے کی ہر کسی کو ترغیب دیتے ہیں ،حق گوئی وبے باکی میں آپ اپنے عظیم والدواعظِ دکن حضرت مولانا محمد حمید الدین حسامی عاقل ؒ کے نقش ِ قدم پر ہیں۔ایسی عظیم اور محترم شخصیت کےساتھ سخت رویہ اور نامناسب گفتگو پولیس کاانتہائی غیر ذمہ دارانہ عمل ہے۔ایک طرف حکومت اور اعلی عہدیداروں کی طرف سے پولیس اہلکاروں کو ہدایت دی جاتی ہےلیکن وہ اس کو نظر انداز کرکے من مانی طریقہ اختیار کئے ہوئے ہیں۔
جمعیۃ علماء کریم نگر اس واقعہ کی سخت مذمت کرتی ہے اوروزیر داخلہ محمود علی ،ڈی جی پی مہندر ریڈی اور کمشنر پولیس سے اپیل کرتی ہےکہ جس نے نازیبا حرکت کی ہے اس کے خلاف سخت کاروائی کریں ،تاکہ ریاست میں مذہبی شخصیات کا احترام پامال ہونے نہ پائےاوراس کے ذریعہ محکمہ ٔ پولیس کی محترم شخصیات کے تئیں صاف وشفاف شبیہ ظاہر ہوگی اوربے قصور لوگ پولیس کے ظلم وزیادتی سے محفوظ رہیں گے