احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے امسال عید الفطر سادگی سے منائیں اور ضرورتمندوں کا تعاون کریں!

سوشل میڈیا ڈیسک آل انڈیا مسلم پر سنل لا بورڈ کا ”سلسلہ پیغام رمضان“ مولانا محمد عمرین محفوظ رحمانی کے خطاب سے اختتام پذیر!

نئی دہلی، 12 مئی (پریس ریلیز):رمضان المبارک اپنی تمام تر برکتوں، رحمتوں اور اللہ کے بے شمار انعامات کے ساتھ ہمارے اوپر سایہ فگن ہے۔ اب بس یہ ماہ مبارک ہم سے رخصت ہوا چاہتا ہے اور عید الفطر بالکل قریب آچکی ہے۔ رمضان المبارک عبادت اور تربیت کا مہینہ ہے کہ اس میں اہل ایمان بندگی کے کام بھی انجام دیتے ہیں اور اچھے اعمال پر جمنے اور پاکیزگی کے ساتھ زندگی گزارنے کی تربیت بھی حاصل کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے اس ماہ مبارک میں بہت سے لوگوں کو اس بات کی توفیق دی اور موقع عطاء فرمایا کہ وہ اپنے دل کی کھیتی کو ذکر و تلاوت اور طاعت و عبادت سے سیراب کریں اور آخرت کا توشہ دنیا سے لے لیں۔

 

یہ اللہ کی مہربانی ہے کہ اہل ایمان نے اس ماہ مبارک میں ذکر و تلاوت کے ساتھ ساتھ خدمت کے کاموں کو بھی اخلاص اور استقامت کے ساتھ انجام دیا ہے۔ کوئی شک نہیں کہ جنہوں نے اس ماہ مبارک کو اچھے کاموں میں صرف کیا ہے عید کی حقیقی خوشیاں ان ہی کیلئے ہے۔ عید تو درحقیقت رمضان میں طاعت و عبادت انجام دینے والوں کا انعام ہے۔ مذکورہ خیالات کا اظہار سوشل میڈیا ڈیسک آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی جانب سے رمضان المبارک میں جاری ”سلسلہ پیغام رمضان“ کی اختتامی نشست سے خطاب کرتے ہوئے ڈیسک کنوینر اور بورڈ کے سکریٹری حضرت مولانا محمد عمرین محفوظ رحمانی صاحب نے کیا۔ انہوں نے فرمایا کہ رمضان المبارک اللہ تعالیٰ کی رحمت و بخشش اور مغفرت کا مہینہ ہے، وہ لوگ خوش قسمت ہیں جنہوں نے اس مبارک و مقدس مہینے میں روزہ، تراویح اور دیگر عبادتوں کے ذریعہ اللہ تعالیٰ کو راضی کیا۔ مولانا رحمانی نے فرمایا کہ اب تو رمضان المبارک ہم سے رخصت ہورہا ہے۔البتہ رمضان کے ذریعے جو تربیت ہم نے حاصل کی ہے اسے ہمیں پورے سال کام میں لانا چاہئے اور اللہ تعالیٰ کے احکامات کی پیروی کرتے ہوئے گناہ، معصیت، نافرمانی اور ہر بری بات سے بچنا چاہیے۔ روزے کا مقصد حصول تقویٰ ہے اور تقویٰ والی زندگی کامیابی اور سرخروئی کا ذریعہ ہے۔ تقویٰ کی یہ کیفیت سال کے ہر مہینے، مہینے کے ہر دن اور دن کے ہر گھنٹے اور منٹ ہمارے ساتھ ہونی چاہیے۔ مولانا نے فرمایا کہ ملک میں کرونا وائرس کی دوسری لہر نے قہر برپا کر رکھا ہے۔ لہٰذا ہمیں اپنی اور دوسروں کی صحت کی حفاظت کیلئے احتیاطی تدابیر اختیار کرنی چاہیے اور بیمار و پریشان حال لوگوں کی خدمت کو لازم پکڑنا چاہیے۔

 

انہوں نے مسلمانوں سے اپیل کی کہ امسال عید الفطر کو سادگی سے منائیں اور غریبوں، یتیموں، مسکینوں اور ضرورتمندوں کی خوب مدد کریں اور عید سے قبل اپنی استطاعت کے مطابق صدقہ فطر ادا کریں، اس کا بھی خیال رکھیں کہ کوئی گھر ایسا نہ ہو جو عید کی خوشیوں سے محروم رہے۔ مولانا محمد عمرین محفوظ رحمانی صاحب نے فرمایا کہ رمضان المبارک کی عظمت و برکت اور اہمیت و فضیلت سے امت مسلمہ کو واقف کرانے اور اس ماہ مبارک سے مکمل استفادے کی راہ ہموار کرنے کیلئے یکم رمضان المبارک سے ہی سوشل میڈیا ڈیسک آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی جانب سے علماء و اکابر کے خطبات کا ایک منفرد سلسلہ بعنوان ”پیغام رمضان“ شروع کیا گیا تھا۔ جس سے حضرت مولانا خالد سیف اللہ رحمانی (کارگزار جنرل سکریٹری بورڈ)، حضرت مولانا فضل الرحیم مجددی (سکریٹری بورڈ)، مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی (رکن بورڈ)، جناب سید سعادت اللہ حسینی (امیر جماعت اسلامی ہند)، مولانا عبیداللہ خان اعظمی (رکن بورڈ)، مولانا اصغر علی حیدری (معروف شیعہ خطیب)، مولانا تنویر ہاشمی (رکن بورڈ)، مولانا رحمت اللہ میر قاسمی کشمیری (رکن بورڈ)، مولانا محمد کلیم صدیقی (ناظم جامعہ شاہ ولی اللہ، پھلت)، مفتی شعیب اللہ خان مفتاحی (بانی و مہتمم جامعہ مسیح العلوم بنگلور)،  مولانا نثار حسین حیدر آغا (صدر کل ہند مجلس شیعہ علماء و ذاکرین)، مولانا حنیف لوہاری (رکن بورڈ)، مفتی حسنین محفوظ رحمانی (رکن بورڈ) وغیرہ نے پرمغز خطبات سے نوازا۔ مولانا محمد عمرین محفوظ رحمانی نے فرمایا کہ الحمدللہ اس سلسلے سے لاکھوں لوگوں نے فائدہ اٹھایا۔ انہوں نے اس سلسلے سے خطاب کرنے والے تمام علماء و اکابر کا شکریہ ادا کیا، اسی طرح انہوں نے سوشل میڈیا ڈیسک کے کارکنان اور اس سے جڑ کر کام کرنے والے تمام ہی نوجوانوں کو دلی مبارک باد پیش کی کہ انہوں نے ”پیغام رمضان“ کے سلسلے میں بڑی محنت کی اور اس سلسلے کو کامیاب بنانے کیلئے بھر پور کوشش کی۔ قابل ذکر ہیکہ ڈیسک کی جانب سے یکم رمضان المبارک سے جاری ”سلسلہ پیغام رمضان“ آج رمضان کی تیسویں شب کو مولانا محمد عمرین محفوظ رحمانی صاحب کی دعا سے اختتام پذیر ہوا!