26/ جنوری کو اُردو پریس کلب نظام آباد کا عظیم الشان افتتاح _ بڑے پیمانے پر تیاریاں

26/ جنوری کو اُردو پریس کلب نظام آباد کا
عظیم الشان افتتاح۔ بڑے پیمانے پر تیاریاں

نظام آباد:12/ جنوری (ای میل) ہندوستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ اُردو پریس کلب کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جس کا تمام تر سہرا نظام آباد کے ان چنندہ صحافیوں کو جاتا ہے جنہوں نے اس عظیم مقصد کو عملی جامہ پہنانے کیلئے عزم مصمم کے ساتھ اس تاریخی مقصد کو پورا کرنے کیلئے متحد ہوئے ہیں۔ 11/ جولائی 2021 ء کو اُردو پریس کلب نظام آباد کے قیام کے سلسلہ میں مشاورتی اجلاس منعقد کیا گیا جس میں اُردو پریس کلب کے قیام کا جذبہ رکھنے والے صحافیوں نے شرکت کرتے ہوئے اس عظیم الشان مقصد کو عملی جامہ پہنانے کیلئے اپنی تائید کا اظہار کیا۔ اُردو پریس کلب نظام آباد کی باڈی تشکیل دی گئی

جس میں سرپرست، صدر، نائب صدور، جنرل سکریٹری، خازن، جوائنٹ سکریٹری، آرگنائزنگ سکریٹریز، پبلسٹی سکریٹری، اراکین کے عہدوں پر تقررات عمل میں لائے گئے۔ نظام آباد کو اُردو صحافت میں ہمیشہ اہمیت کا حامل مانا جائیگاکیونکہ نہ صرف ریاست تلنگانہ بلکہ سارے دکن میں نظام آباد واحد مقام ہے جہاں سے کثیر تعداد میں مقامی اخبارات کی اشاعت عمل میں لائی جاتی ہے۔ نظام آباد کے اُردو صحافی اپنا قیمتی وقت اور سرمایہ اُردو صحافت کیلئے وقف کررہے ہیں ایسے میں اُردو پریس کلب کا قیام ایک تاریخی اقدام مانا جارہا ہے۔ 26/ جنوری 2022 ء کو اعظم روڈ روبرو لکشمی میڈیکل اُردو پریس کلب دفتر کا علمائے دین کی دعاؤں سے افتتاح عمل میں لایا جائیگا۔ اُردو پریس کلب نظام آباد کا باقاعدہ طور پر رجسٹریشن کرایا گیا جس کا رجسٹریشن نمبر 374 of 2021   ہے

۔ اُردو پریس کلب نظام آباد فی الوقت اعظم روڈ پر روبرو لکشمی میڈیکل عارضی دفتر میں قیام و افتتاح عمل میں لایا جارہا ہے لیکن محبان اُردو کے تعاون سے اُردو پریس کلب نظام آباد کی مستقل عمارت بھی قائم کی جائیگی انشاء اللہ۔ کسی بھی مقصد کو عملی جامہ پہنانے کیلئے پہلے کئی تکالیف اور مشکل مرحلوں سے گذرنا پڑتاہے اُردو پریس کلب نظام آباد کے قیام کیلئے فی الوقت جو تکالیف اور مشکل مرحلہ درپیش آرہے ہیں اس سے نمٹنے کیلئے اُردو کلب کی جملہ باڈی عزم و مصمم کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے انشاء اللہ آنے والی نسل جو اُردو صحافت سے وابستہ ہوگی ان کیلئے ایک ایسا مضبوط، پختہ اور مستقل پلاٹ فارم فراہم کیا جائیگا ایک دن آئیگا جبکہ مستقبل کے اُردو صحافی گامزن ہوں گے اور اُردو پریس کلب نظام آباد کا قیام عمل میں لانے والوں پر فخر کیا جائیگا۔