تجوید کا سیکھنا ہر مسلمان کے لئے لازمی

ریاستی مسابقہ قرأت کا آغاز، بین الاقوامی قاریہ امۃ الرشید کا خطاب

حیدرآباد۔ 15جنوری (اردو لیکس) سکریٹری شرفیہ قرأت اکیڈیمی قاری محمدظہیرالدین کے بموجب اکیڈیمی کے نویں سالانہ مسابقہ قرأ ت کا آغاز آفیسرس میس قدیم ملک پیٹ قاری محمد علی شرف الدین کی قرأت سے ہوا۔ مسابقہ قرأت برائے طالبات و خواتین میں تقریباً 100کے قریب قاریات نے حصہ لیا۔ مسابقہ کی خصوصیت یہ رہی کہ اس میں 6 سالہ لڑکیوں نے بھی حصہ لیا۔ مہمان خصوصی ڈاکٹر معراج صاحبہ یم ڈی نے مسابقہ کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اس سے لڑکیوں میں قرآن مجید کو تجوید و قرأت سے سیکھنے کا شوق پیداہوتا ہے۔ بین الاقوامی قاریہ امۃ الرشید سعیدہ ارشدی نے فنی تجوید و قرأت پر کہا کہ مرد ہو یا عورت، لڑکا ہو یا لڑکی ہر مسلمان عاقل و بالغ کے لئے تجوید کا سیکھنا لازمی ہے۔ تجوید کے بغیر قرآن مجید پڑھنا گناہ ہے۔ قرآن مجید کا نزول تجوید ہی کے ساتھ ہوا اور تجوید ہی کے ساتھ ہم تک سینہ بہ سینہ پہنچا۔ ڈائرکٹر شرفیہ قرأت اکیڈیمی حافظ و قاری ڈاکٹر محمدنصیرالدین منشاوی نے ہر سال مسابقہ میں طالبات و خواتین کی بڑھتی ہوئی تعداد پر مسرت کا اظہار کیا۔ مسابقہ میں انعام یافتگان کا اعلان اتوار 16جنوری بعد عشاء ہونے والے جلسہ تقسیم اسناد و انعامات میں کیا جائے گا۔ کل مرد حضرات طلباء کا مسابقہ اسی مقام پر ہوگا۔ آج کے مسابقہ کی صدارت قاریہ امۃ الرشید سعیدہ ارشدی نے کی جب کہ ان ہی کی دعا پر مسابقہ اختتام کو پہنچا۔ عائشہ خانم اور محمدی بیگم نے تمام شعرکاء کا شکریہ ادا کیا۔