شاہ رخ خان کے بیٹے آریان خان کو ملی ممبئی ہائی کورٹ سے بڑی راحت _ کہا آریان خان کے خلاف نہیں ملا کوئی ثبوت

ممبئی _ ممبئی ہائی کورٹ نے شاہ رخ خان کے بیٹے آریان خان کی ضمانت سے متعلق آج تفصیلی حکم نامہ جاری کیا ہے جس میں عدالت نے کہا کہ آریان خان، ارباز مرچنٹ اور منمون دھامیچا کے درمیان منشیات سے متعلق جرائم کرنے کی سازش کا کوئی ثبوت نہیں ملا۔ عدالت نے کہا کہ ان کے درمیان واٹس ایپ بات چیت میں کوئی قابل اعتراض مواد  نہیں ملا۔

عدالت نے  14 صفحات پر مشتمل ضمانت کے حکم نامے میں واضح کیا ہےکہ نارکوٹکس کنٹرول بیورو (این سی بی) کے پاس آریان اور اس کے ساتھیوں کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ہے۔

واضح رہےکہ نارکوٹکس کنٹرول بیورو نے 2 اکتوبر کو ممبئی کے ساحل کے قریب ایک کروز شپ پر دھاوا کرتے ہوئے  منشیات استعمال کرنے کے الزام میں آریان خان اور دیگر افراد کو حراست میں لیا تھا۔

بعد ازاں  بمبئی ہائی کورٹ نے ایک لاکھ روپےکے ضمانتی مچلکوں کے عوض آریان خان کی ضمانت منظور کی تھی جس پر وہ 26 دن جیل میں رہنےکے بعد جیل سے رہا ہوئے تھے۔عدالتی حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ ‘این سی بی کی جانب سے ایسا کوئی ثبوت عدالت کے سامنے پیش نہیں کیا گیا جس سے یہ ثابت ہو کہ تمام ملزمان غیر قانونی کام کرنے کی مشترکہ نیت رکھتے تھے

عدالت نے مزید کہا کہ ‘صرف اس لیے  آریان اور ان کے دوست ارباز مرچنٹ اور مونمُن دھمیچا کے خلاف سازش کے الزام کی بنیاد نہیں بن سکتا کہ یہ تمام ایک ہی کروز شپ پر سفر کررہے تھے’ممبئی ہائی کورٹ نے کہا کہ این سی بی کے تحقیقاتی عہدیداروں کے ذریعہ ریکارڈ کیےگئے تمام ملزمان کے اعترافی بیانات پر بھی بھروسہ نہیں کیا جاسکتا۔