نیشنل

اعظم خان کے فرزند عبداللہ اعظم خان کو تمام مقدمات میں ضمانت _ 23 مہینے بعد جیل سے رہا

لکھنو _ 15 جنوری ( اردو لیکس ڈیسک) سماج وادی پارٹی کے رکن پارلیمنٹ محمد اعظم خان کے بیٹے عبداللہ اعظم خان کی تقریبا دو سال بعد ضمانت منظور ہوئی ہے اور ہفتہ کی شام جیل سے رہا ہوگئے ۔جو اتر پردیش کی سیتا پور جیل میں بند ہیں اور وہ اتوار کو سیتا پور جیل سے رہا ہوسکتے ہیں۔ عبداللہ اعظم اور اعظم خان 26 فروری 2020 سے سیتا پور جیل میں بند ہیں۔ عبداللہ اعظم کے خلاف تقریباً 43 مقدمات درج ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ عبداللہ اعظم کو تمام 43 مقدمات میں عدالت سے ضمانت مل چکی ہے سیتا پور جیل کے باہر سینکڑوں کارکنوں نے عبداللہ اعظم کا استقبال کیا۔
 عبداللہ اعظم 23 مہینے بعد  جیل سے باہر آگئے ہیں لیکن ان کے والد اور رام پور سے سماج وادی پارٹی کے رکن پارلیمنٹ محمد اعظم خان اب بھی سیتا پور جیل میں ہی رہیں گے کیونکہ اعظم خان کو بعض معاملات میں ضمانت نہیں مل سکی ہے، اس لیے اعظم خان خان کو فی الحال جیل میں رہنا پڑے گا۔
عبداللہ کا انتخاب ہائی کورٹ نے منسوخ کر دیا تھا۔
عبداللہ اعظم نے 2017 میں سماج وادی پارٹی کے ٹکٹ پر رام پور کی سوار اسمبلی سیٹ سے انتخاب لڑا تھا اور کامیابی حاصل کی تھی  لیکن کانگریس کے امیدواروں نواب کاظم علی اور سنا وید میاں نے عبداللہ اعظم کی عمر کو لے کر شکایت درج کروائی تھی، جس کے بعد الہ آباد ہائی کورٹ نے عبداللہ اعظم کا انتخاب کالعدم کردیا تھا۔ یہ معاملہ ابھی تک سپریم کورٹ میں زیر التوا ہے۔
تمام مقدمات میں ضمانت
عبداللہ اعظم کے خلاف تقریباً 43 مقدمات درج ہیں۔ عبداللہ اعظم کو ان تمام مقدمات میں ضمانت مل گئی ہے اور اب وہ جیل سے باہر آگئے ہیں  عبداللہ اعظم کے خلاف رام پور ضلع کے سوار، گنج، عظیم نگر اور سول لائن تھانوں میں مقدمات درج ہیں۔ اس کے علاوہ اس کے خلاف مرادآباد ضلع کے تھانہ کٹگھر اور چھجلت تھانے میں بھی مقدمات درج ہیں۔

بیوی کو ضمانت مل گئی ہے۔
26 فروری 2020 کو اعظم خان، ان کی اہلیہ تنظیم فاطمہ اور بیٹے عبداللہ اعظم نے اپنے خلاف جاری مقدمات میں رام پور کی ضلعی عدالت میں خودسپرد ہوئے تھے ۔ تب سے عبداللہ اعظم سیتا پور جیل میں بند ہیں جب کہ ان کی ماں تنظیم فاطمہ ضمانت پر رہا ہونے کے بعد پہلے ہی گھر پہنچ چکی ہیں۔ اب کل عبداللہ اعظم جیل سے رہا ہوں گے، اس کے بعد ان کے والد اور رام پور کے رکن پارلیمنٹ اعظم خان ہی سیتا پور جیل میں رہیں گے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button