شادی کے بغیر ایک ساتھ زندگی گزارنا معاشرتی اور اخلاقی طور پر ناقابل قبول: پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ

نئی دہلی _ پنجاب اور ہریانہ ہائیکورٹ نے نوجوان لڑکےاورلڑکی کو شادی کے بغیر ایک ساتھ زندگی گزارنے (لیو ان ریلیشنز) پر اہم ریمارکس کئے ہیں۔ ہائی کورٹ نے یہ واضح کردیا کہ یہ معاشرتی اور اخلاقی طور پر قابل قبول نہیں ہے۔ایک دوسرے سے محبت میں گھر سے بھاگنے والے ایک جوڑے نے پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ میں تحفظ فراہم کرنے درخواست دائر کی ۔ جس کی سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے پٹیشن پر مذکورہ بالا تاثرات دیئے۔

 

گلجا کماری (19) اور گرووندر سنگھ (22) کا تعلق پنجاب کے ضلع ترن ترن سے ہے۔ دونوں میں محبت ہوگئی۔ تاہم ، گلجا کماری کے والدین نے اس  رشتے کو قبول نہیں کیا۔جس پر وہ اپنے گھروں سے بھاگ کر ساتھ رہ رہے ہیں۔ انہوں نے حال ہی میں یہ الزام عائد کرتے ہوئے ہائی کورٹ میں ایک درخواست دائر کی کہ انہیں گلجا کماری کے والدین سے موت کی دھمکیاں موصول ہورہی ہیں۔

 

ان کی درخواست پر سماعت کے دوران  جسٹس ایچ ایس مدن نے کہا درحقیقت ، دونوں درخواست گزار اپنے لیو ان ریلیشنز کے تعلقات کو قانونی حیثیت حاصل کرنے کے خواہاں ہیں۔ لیکن یہ تعلقات اخلاقی اور معاشرتی طور پر قابل قبول نہیں ہیں