نیشنل

تعلیمی نصاب میں مسلم حکمرانوں سے متعلق کئی ابواب کو کم کر دیا گیا ۔مغل سلطنت باب کا نام بھی تبدیل

نئی دہلی: مرکزی حکومت کی جانب سے نیشنل کونسل آف ایجوکیشنل ریسرچ اینڈ ٹریننگ (این سی ای آر ٹی) کے نصاب میں بڑے پیمانے پرتبدیلیاں کی جارہی ہیں۔ حکمراں جماعت بی جے پی ایک عرصہ سے یہ کہتی آرہی ہے کہ حملہ آوروں اور مغلوں کی تاریخ کو نصاب میں شامل کیا گیا ہے۔ تعلیمی نصاب سے مسلمان حکمرانوں کے بہت سے ابواب کو ہٹا دیا ہے جبکہ کئی کو مختصر کر دیا گیا ہے۔

تحقیقات سے معلوم ہوا کہ مسلم حکمرانوں سے متعلق نصاب میں کئی بڑی تبدیلیاں کی گئی ہیں۔ کلاس 7 کی تاریخ کی نصابی کتاب ‘ہمارا ماضی – II’ سے دہلی سلطنت سے متعلق بہت سے صفحات کو ہٹا دیا گیا ہے۔ اس میں تغلق، خلجی، لودھی اور مغل حکمرانوں سے متعلق ابواب ہیں۔

ان تبدیلیوں کے بارے میں این سی ای آر ٹی کی طرف سے یہ دلیل دی گئی ہے کہ نصاب اور کتابوں میں تبدیلی کے بارے میں فیصلہ صرف سرکاری ادارے ہی لیتے ہیں۔ اس وقت نصاب پر نظر ثانی کا مقصد بچوں پر پڑھائی کا بوجھ کم کرنا ہے تاکہ کورونا کے دوران ہونے والے نقصان کی تلافی ہو سکے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button