خانگی ٹیچرس کی امدادی اسکیم میں خامیاں کئی اساتذہ اور غیرتدریسی اسٹاف استفادہ سے محروم۔ جے اے سی قائدین کا بیان

حیدرآباد۔ یکم مئی (پریس نوٹ) پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنس جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے کہا ہے کہ خانگی اسکولوں کے ٹیچرس کی امداد کی اسکیم پر عمل آوری میں کئی خامیاں ہیں جس کی وجہ سے بے شمار مستحق اساتذہ مدد سے محروم رہے۔ کمیٹی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ان خامیوں اور تکنیکی مسائل کو دور کیا جائے اور اصلاح کے بعد تمام مستحق اساتذہ و غیرتدریسی عملے کے ارکان کے لئے امداد کو یقینی بنایا جائے۔ جے اے سی کے قائدین نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس اسکیم میں

پری پرائمری ٹیچرس، پارٹ ٹائم ٹیچرس، غیرتدریسی عملہ بشمول صفائی کارکنوں کو شامل کیا جائے۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے عہدہ داروں فضل الرحمن خرم، سید حیدر علی، محمد احمد حسین، محمد عبدالحکیم، میر محسن علی اور محمد مخدوم علی خان نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ فی الحال ان اساتذہ کی مدد کی گئی ہے جو سرکاری ریکارڈ میں شامل ہیں جن میں زیادہ تر ٹرینڈ اساتذہ ہیں جب کہ خانگی اسکولوں میں زیادہ تعداد ان ٹرینڈ ٹیچرس اور پری پرائمری ٹیچرس کی ہے۔ اس کے علاوہ بڑی تعداد میں غیرتدریسی عملہ بھی برسرخدمت ہے اور سخت شرائط کی وجہ سے ان افراد کا احاطہ نہیں ہوسکا۔ جے اے سی

قائدین نے کہا کہ خانگی اسکولوں کے اساتذہ حقیقی معنی میں سماج کے معمار ہیں اور ان کے ساتھ وباء کے ان دشورگذار حالات میں انصاف ہونا چاہئے۔ جے اے سی قائدین نے خانگی اسکولوں کے انتظامیہ کے مسائل بھی اٹھائے اور کہا کہ طویل عرصہ سے وباء سے متاثر ہونے کی وجہ سے ریاست میں سینکڑوں اسکولس بند ہو رہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ایک اندازہ کے مطابق صرف شہر حیدرآباد میں 200 سے زائد اسکولس بند ہوچکے ہیں۔ خانگی اسکولس کے انتظامیہ کو عمارتوں کے کرائے، بجلی کے بل اور ٹیکسس ادا کرنے میں مشکلات پیش آرہی ہیں۔ جے اے سی قائدین نے حکومت سے خواہش کی کہ خانگی اسکولوں کے لئے بھی ایک راحت یا امدادی پیکیج دیا جائے۔ انھوں نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ اسکولوں کے برقی بلس کو سلاب 7 کے تحت کیا جائے۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے قائدین نے کہا کہ ریاستی حکومت کی تعلیمی پالیسی میں شفافیت نہیں ہے۔ ریاستی حکومت نے خانگی اسکولس کے اساتذہ کو جو کورونا وائرس کی وباء سے پیدا حالات سے بری طرح متاثر ہوئے ہیں، 2 ہزار روپے اور 25 کلو چاول ماہانہ امداد فراہم کرنے کی اسکیم شروع کی ہے۔ جے اے سی قائدین نے کہا کہ اس اسکیم پر عمل آوری کے لئے اسکول انتظامیہ سے صرف 2 ایام کار میں تفصیلات حاصل کی گئیں جس کی وجہ سے خانگی مدارس تمام ٹیچرس کی تفصیلات فراہم نہیں کرسکے۔ جے اے سی قائدین نے کہا کہ ایسے اساتذہ اور غیرتدریسی عملہ کے لئے ایک اور موقع فراہم کرنا چاہئے۔