تلنگانہ

تلنگانہ میں مذہبی اجتماعات پر پابندی۔ دوکانات، شاپنگ مالس اور عوامی مقامات پر ماسک نہ لگانے والوں کو ایک ہزار جرمانہ

حیدرآباد:تلنگانہ حکومت نے کووڈ کیسز کے ساتھ ساتھ اومیکرون ویرینٹ کے بڑھتے ہوئے معاملات کے پیش نظر مزید چوکس رہنے اور احتیاطی تدابیر پر سختی سے عمل آوری کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت نے کووڈ قواعد سے متعلق جاری کردہ جی او میں اس مہینے کی دس تاریخ تک توسیع کردی ہے۔ چیف سکریٹری سومیش کمار نے ریاست میں کووڈ پابندیوں کے نفاذ میں توسیع کرتے ہوئے جی او نمبر 1 جاری کیا ہے۔ اس ماہ کی 10 تاریخ تک جلسوں، ریلیوں، سیاسی، ثقافتی اور مذہبی اجتماعات پر پابندی ہوگی۔ اسی طرح ایسے تمام پروگرامس پر پابندی ہوگی جہاں لوگ جمع ہوتے ہیں۔  حکومت کے چیف سکریٹری سومیش کمار نے ایک ایسے وقت میں ریاست میں کووڈ کی صورتحال پر ایک اعلیٰ سطحی جائزہ اجلاس طلب کیا جب ملک کی مختلف ریاستوں میں اومیکرون کے کیسس تیزی سے پھیل رہے ہیں۔ ڈی جی پی مہیندر ریڈی، محکمہ صحت اور پنچایتی راج کے سینئر عہدیدار اس میٹنگ میں شرکت تھے۔

چیف سکریٹری نے کووڈ کو پھیلنے سے روکنے کے  اقدامات کے حصے کے طور پر پہلے سے جاری کردہ احکامات کو سختی سے نافذ کرنے کی ہدایت دی۔ انہوں نے پبلک ٹرانسپورٹ، دکانوں، شاپنگ مالس اور دفاتر میں ماسک لگانے اور سماجی فاصلے پر سختی سے عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کی ہدایت دی۔ سومیش کمار نے کہا کہ اسکولوں اور تعلیمی اداروں میں عملہ اور طلباء لازمی طور پر ماسک پہنیں اور کووڈ قوانین کی پابندی کریں۔واضح کیا گیا کہ ماسک کے بغیر عوامی مقامات پر گھومنے والوں پر ایک ہزار روپے جرمانے پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے۔ تمام سے کووڈ کے اصولوں پر عمل کرنے کو کہا گیا ہے۔ انھوں نے مشورہ دیا کہ خاص طور پر بزرگوں اور دائمی بیماریوں میں مبتلا افراد کا زیادہ خیال رکھا جائے۔

اس دوران ریاست میں اومیکرون کے مزید 12 نئے کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔ تلنگانہ میں اب تک رجسٹرڈ اومیکرون کے کیسوں کی جملہ تعداد 79ہوگئی ہے۔ ریاست میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے 317 نئے کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button