اسپشل اسٹوری

پاکستان پبلک سروس کمیشن کے امتحانات میں پہلی مرتبہ ہندو لڑکی کامیاب

حیدرآباد _ پاکستان میں ایک ہندو لڑکی نے ملک کے  اعلیٰ ترین ملازمت کے لیے منتخب ہونے والے پاکستان پبلک سروس کمیشن کے امتحانات میں کامیابی حاصل کرتے ہوئے  تاریخ رقم کی۔ پاکستان کی 73 سالہ تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ کسی ہندو لڑکی کو وہاں کی انتظامی خدمات کے لیے منتخب کیا گیا ہے۔ وہ اپنی پہلی کوشش میں کامیاب ہوئی اور پاکستان کے بہت سے ہندوؤں کے لیے ایک مثالی بن گئی۔

پاکستان کے صوبہ سندھ کے شکار پور گاؤں کی 27 سالہ ثنا رام چند گالوانی کو پاکستان پبلک سروس کمیشن کی جانب سے  منعقد کئے جانے والے سنٹرل سپیریئر سروسز (سی ایس ایس) کا امتحان پاس کرنے کے بعد اعلیٰ ملازمت کے لیے منتخب کیا گیا ہے۔ اس امتحان میں پہلی بار  شرکت کرتے ہوئے ثنا رام چند نے کامیابی حاصل کی جو سب سے مشکل سمجھا جاتا ہے۔ اس سال صرف 2 فیصد امیدوار کامیاب ہوئے۔

ثنا رام چند گالوانی نے کہا کہ’اعلی خدمات کے لیے منتخب ہونے پر خوشی ہے۔ میں نے وہ کیا جو میں نے طے کیا۔ میں نے بچپن سے سی ایس ایس کے لیے منتخب ہونے کا خواب دیکھا تھا اور میں نے اس کے لئے سخت محنت کی اور آخر کار کامیابی حاصل کی۔ ثنا نے شکارپور کے ایک سرکاری اسکول میں تعلیم حاصل کی تھی اور یورولوجی میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button