تلنگانہ

تلنگانہ میں لاک ڈاؤن کی باتیں بے بنیاد: محکمہ صحت

حیدرآباد: تلنگانہ کے محکمہ صحت کے ڈائرکٹر ڈاکٹرسرینواس راو نے تلنگانہ میں جنوری میں لاک ڈاون کی اطلاعات کو بے بنیاد قراردیا اور کہا کہ ہم نے کورونا کی دولہروں کے دوران کئی باتیں سیکھی ہیں۔ریاست میں دولہروں کے دوران لاک ڈاون اور نائٹ کرفیو بھی نافذ کیاگیا تھا۔انہوں نے نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ کورونا کی روک تھام صرف احتیاط سے ہی ممکن ہے۔ریاست میں کوویڈ کے پہلے ڈوز کی صدفیصد تکمیل ہوگئی اور دوسرے ڈوز کا کام 68فیصد ہوگیا ہے۔

عوام کو تشویش کی ضرورت نہیں ہے۔کورونا کی تیسری لہر میں اومیکرون کی علامات بھی معمولی ہیں اور چند فیصد افراد کو ہی اسپتال میں داخل کروانے کی ضرورت ہے۔ان چند فیصد افراد کا تحفظ بھی ہماری ذمہ داری ہے۔تمام طرح کی احتیاط اور حکومت سے تعاون کے ذریعہ سے تیسری لہر سے نمٹاجاسکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ریاست میں 15تا18عمر کی گروپ کے تمام افراد کو ٹیکوں کی فراہمی کے لئے ریاستی حکومت نے مکمل انتظامات کیے ہیں۔ان ٹیکوں کا آج سے تلنگانہ میں آغاز ہواہے۔انہوں نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہاکہ حکومت نے ٹیکوں کی فراہمی کیلئے کئی مراکز قائم کئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ کورونا کی تیسری لہر کے پیش نظر بچوں کو ٹیکوں کے پروگرام کی شروعات کی گئی ہے جو ہمارے ملک میں تیارکی گئی ہے۔یہ دیسی ٹیکے تمام طرح سے محفوظ ہیں۔

انہوں نے سنکرانتی کے موقع پر ہجوم کے جمع ہونے کے پیش نظر ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ اس سلسلہ میں ریاستی حکومت نے پہلے ہی عوامی اجتماعات پر پابندی عائد کردی ہے۔آنے والے دنوں میں کورونا معاملات میں اضافہ کا امکان ہے جس کے پیش نظر تمام کو چوکسی کی ضرورت ہے۔سرینواس نے کوویڈ کے اصولوں پر عمل کرنے کی ضرورت پر بھی زوردیا۔ساتھ ہی انہوں نے سیاسی جماعتوں سے بھی اپیل کی کہ وہ اپنی ایسے سیاسی سرگرمیوں کو نہ کریں جس میں عوام جمع ہوتے ہیں۔

متعلقہ خبریں

Back to top button