تلنگانہ ریاست 5 لاکھ کروڑ روپیوں کی مقروض: محمد علی شبیر

 حیدرآباد _ کانگریس کے سینئر لیڈر و سابق وزیر محمد علی شبیر نے ریاست میں قرضوں کے حصول اور اس کے استعمال اور اس کی ادائیگی سے متعلق وائٹ پیپر جاری کرنے کا حکومت سے مطالبہ کیا ہے انہوں نے مالی سال 2021-22 کے  اصل بجٹ میں ترمیم کرکے اسے پیش کرنے کا بھی مطالبہ کیا محمد علی شبیر نے ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا کہ بدلے ہوئے حالات کے پیش نظر مالی سال 2021-22  کا نظر ثانی شدہ بجٹ پیش کیا جائے۔وزیر خزانہ ہریش راؤ نے  جاریہ سال 21 مارچ کو سال 2021-22 کے لئے 2.31 لاکھ کروڑ روپئے کا بجٹ پیش کیا۔ جیسے ہی یہ بجٹ پیش کیا گیا ، کانگریس پارٹی نے کہا تھا یہ بجٹ غیر حقیقت پسندانہ ہے اور اس کے اعدادوشمار بہت زیادہ ہیں۔ سال کا پہلا سہ ماہی اختتام کو پہنچ رہا ہے اور سرکاری خزانے اب تقریبا  خالی ہے۔
شبیر علی نے الزام لگایا کہ ریاست تلنگانہ  5 لاکھ کروڑ روپیوں کے قرض میں مبتلا ہوگئی  ہے جس  میں مختلف کمپنیوں اور اداروں کے لئے حاصل کردہ قرض بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے مختلف ایجنسیوں سے ان کے مضمرات کے بارے میں  سوچے سمجھے بغیر اعلی شرح سود پر بڑے قرضے لئے ہیں۔ تلنگانہ حکومت نے  2014-15ء سے حاصل کردہ قرضوں پر سود کی ادائیگیوں پر 17،584 کروڑ روپے کی رقم ادا کی ہے ۔