تلنگانہ

تبادلہ ہونے والے مقام پر ڈیوٹی جوائین کرنے کے ایک گھنٹہ بعد محکمہ تعلیم کے ملازم کی ہارٹ اٹیک سے موت

تبادلہ ہونے والے مقام پر ڈیوٹی جوائین کرنے کے ایک گھنٹہ بعد محکمہ تعلیم کے ملازم کی ہارٹ اٹیک سے موت 

حیدرآباد_ 7 جنوری ( اردو لیکس) تبادلہ ہونے والے مقام پر ڈیوٹی جوائین کرنے کے ایک گھنٹہ کے بعد ایک ملازم کی ہارٹ اٹیک سے موت ہوگئی۔پولیس اور اسکول انچارج ہیڈ ماسٹر ویمولا سرینواس کے مطابق، نلگنڈہ منڈل کے  51 سالہ ناگیلا مرلی دھر پداوورا  ضلع پریشد ہائی اسکول میں ریکارڈ اسسٹنٹ کے طور پر کام کررہے تھے ۔ ملازمین کے حالیہ تبادلوں میں، انھیں سوریا پیٹ ضلع کے حضور نگر کے کیمپ ضلع پریشد ہائی اسکول میں تفویض کیا گیا تھا۔ مرلیدھر، جو پہلے سے بیمار ہیں، جمعرات کی صبح تبادلہ کئے گئے نئے اسکول پہنچ کر ڈیوٹی جوائین کی ۔بعد ازاں  وہ اسکول کے گیٹ سے باہر نکلے ۔ تو انھیں سینے میں شدید درد ہوا اور وہ فوراً گر پڑے ۔  اسکول کے عملے نے انھیں ہاسپٹل منتقل کردیا جہاں ڈاکٹروں نے کہا کہ وہ پہلے ہی فوت ہو چکے ہیں متوفی کی بیوی جیاما، دو بیٹیاں اور دو بیٹے ہیں۔ ایس آئی وینکٹ ریڈی نے کہا کہ بیوی کی شکایت کے مطابق کیس درج کیا گیا ہے۔ بی جے پی کے ضلع صدر بوبا بھاگیاریڈی نے اسپتال میں اہل خانہ کو پرسہ دیا ۔ انھوں نے الزام لگایا کہ مرلی دھر کی موت  جی او 317  کی وجہ سے ہوئی۔ انہوں نے جی او کو منسوخ نے کرنے کا مطالبہ کیا۔

واضح رہے کہ ریاست میں نئے زونل سسٹم کے تحت ملازمین اور ٹیچرس کے تبادلوں کا عمل جاری ہے جس کے لئے جی او 317 جاری کیا گیا ہے اس جی او کے تحت تبادلوں میں ناانصافی ہونے کی سینکڑوں ملازمین خاص طور پر اساتذہ احتجاج کررہے ہیں اور سیاسی جماعتیں بھی جی او کی منسوخی کا مطالبہ کررہے ہیں

متعلقہ خبریں

Back to top button