تلنگانہ

نریندر مودی حکومت کے خلاف چیف منسٹر چندرشیکھرراو کا دھرنا

حیدرآباد _ ٹی آر ایس  حکومت نے دھان کی خریداری کے مسئلہ پر مرکزسے واضح موقف کامطالبہ کرتے ہوئے  دھرنا دیا ۔دھرناچوک اندراپارک میں دیئے گئے اس دھرنے میں چیف منسٹر کے چندرشیکھرراو سمیت ریاستی کابینہ کے تمام ارکان، ٹی آر ایس کے ارکان مقننہ، ارکان پارلیمنٹ، ضلع پریشد صدورنشین اور دیگر اہم رہنماوں نے حصہ لیا۔ یہ دھرنا،مرکزی حکومت پر دباو ڈالنے کے لئے دیا گیا۔بعد ازاں ٹی آرایس کے وفد نے راج بھون میں گورنر ڈاکٹر تمیلی سائی سوندراراجن سے ملاقات کی اور ان کو میمورنڈم پیش کرتے ہوئے اس مسئلہ پر مداخلت کی خواہش کی۔چیف منسٹر کے چندرشیکھرراو نے اس دھرنے میں حصہ لیتے ہوئے نریندر مودی حکومت کی نامناسب پالیسیوں کی مذمت کی اور ریاست کے ساتھ مرکز کے نامناسب و امیتازی سلوک کا الزام لگایا۔چیف منسٹر نے کہا کہ ٹی آرایس، دھان کی خریداری کے مسئلہ پر اپنی جدوجہد کو جاری رکھے گی۔انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت کی مخالف کسان پالیسیوں اور تلنگانہ ریاست کے ساتھ امتیازی سلوک کے خلاف یہ شدید احتجاج کیاجارہا ہے۔انہوں نے مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ نئے زرعی قوانین اور نئے بجلی کے قانون سے دستبرداری اختیار کرے۔انہوں نے کہا کہ سال 2006 میں گجرات کے چیف منسٹر کی حیثیت سے نریندر مودی نے بھی اس وقت کی مرکزی حکومت کے خلاف 51 گھنٹے طویل دھرنا دیا تھا

متعلقہ خبریں

Back to top button