انٹر نیشنل

سعودی عرب نے دو سال بعد خانہ کعبہ کے اطراف حفاظتی رکاوٹوں کو ہٹانے کا کیا فیصلہ

جدہ _ 3 اگست ( اردولیکس) سعودی عرب نے دو سال کے بعد خانہ کعبہ کے اطراف حفاظتی رکاوٹوں کو ہٹانے کا فیصلہ کیا ہے، جس سے نمازیوں کو ایک بار پھر اللہ کے گھر کو چھونے کی اجازت دی گئی ہے۔

 

شیخ ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس، جو دو مقدس مساجد کے امور کے جنرل پریزیڈنسی کی قیادت کرتے ہیں، نے اس فیصلے کا اعلان کیا۔حجاج کے درمیان سماجی فاصلے کو یقینی بنانے کے لیے رکاوٹیں لگائی گئی تھیں۔

 

خانہ کعبہ کے آس پاس کا علاقہ، جہاں زائرین سات بار طواف کرتے ہیں، کو کورونا وائرس کے پھیلاؤ پر قابو پانے کے لیے ایک حفاظتی اقدام کے طور پر مارچ 2020 میں بند کر دیا گیا تھا۔

 

خانہء کعبہ کے اطراف رکاوٹوں کی وجہ سے زائرین حجر اسود کو بوسہ دینے، ملتزم پر دعائیں مانگنے اور حطیم میں نماز ادا کرنے سے محروم تھے۔ رکاوٹیں قائم کرنے سے قبل زائرین حطیم میں نماز بھی ادا کرتے تھے۔ ملتزم پر جا کر دعائیں بھی مانگتے تھے اور حجر اسود کو بوسہ دینے کی سنت بھی ادا کر پاتے تھے اب تازہ فیصلہ سے زائرین بلا رکاوٹوں کے تمام امور کو انجام دے سکتے ہیں

متعلقہ خبریں

Back to top button