جنرل نیوز

مرزا جاوید علی نے دہلی کے امام صاحبان کی تنخواہ کی عدم ادائیگی پر کیا برہمی کا اظہار

نئی دہلی،20/جنوری(پریس ریلز) جہاں ایک طرف دہلی حکومت اپنے بلند بانگ اور پرفریب وعدے پورے کرنے میں کھوکھلی ثابت ہورہی ہے وہیں دوسری طرف عوام کے ساتھ جملہ محکمہ جات بھی بدحالی وزبوں حالی کا مسلسل شکار ہے،عوامی مفادات کے تحت کام نہ کرنا تو گویاان کا شیوہ بن گیا ہے اور اس معاملے میں تو انہوں نے بی جے پی کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے،محض دکھلاوے اور ڈھونگ سے کتنے دنوں تک عوام کو بے وقوف بنایا جاسکتا ہے۔د

ہلی کے ائمہ ومؤذنین کو وظائف کئی مہینوں سے ادانہیں کئے گئے ہیں،ائمہ ومؤذنین کی متعدد تنظیوں کی طرف سے وقف بور ڈ کے چیئرمین سمیت وزیر اعلی اروند کجریوال تک کو وظائف کی عدم ادائیگی کی صورت میں ائمہ ومؤذنین کو بنیادی ضرورتوں کو پوری کرنے میں ہورہی دشواری وپریشانی سے واقف کرایا گیا ہے مگران کی طرف سے تاہنوز خواطر خواہ کوئی پیش رفت ہوئی اور نہ کوئی یقین دہانی کرائی گئی ہے،ایسا معلوم ہوتا ہے کہ دہلی کے ائمہ مؤذنین کے وظائف حکومت دہلی کے رحم وکرم سے اداکئے جاتے ہیں جبکہ حقیقت یہ ہے ہمارے آبا واجداد نے اپنی جو جائیدادیں وقف کی ہیں ان ہی کی آمدنی سے ائمہ ومؤذنین و بیواؤں کو وظائف اور دیگر فلاحی وسماجی اخراجات پورے کئے جاتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار مٹیا محل اسمبلی حلقہ کے سابق کانگریس امیدوار اور چاندنی چوک شہر ضلع کانگریس کمیٹی کے صدر مرزا جاوید علی نے پریس کو دیئے اپنے اعلامیہ میں کیا۔انہوں نے ائمہ ومؤذنین کو سماج کی محترم وقابل احترام شخصیت بتلاتے ہوئے کہا کہ ان کے ساتھ حکومت کا چھلاوا اور سوتیلا سلوک ہمیں کسی بھی صورت ناقابل برداشت ہے اور جلد دہلی حکومت نے ائمہ ومؤذنین کے مطالبات کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے وظائف کی ادائیگی نہیں کی تو ہم عوامی آواز بن کردہلی وقف بورڈ کے خلاف ایک بڑی تحریک کی شکل میں سڑکوں پر اترنے پر مجبور ہوں گے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button