نیشنل

کرناٹک کی ایک جامع مسجد پر بھی ہندو تنظیموں کا دعویٰ

نئی دہلی: ریاست اتر پردیش کے وارانسی میں گیان واپی مسجد کا تنازعہ ابھی تک حل نہیں ہوا کہ کرناٹک سے ایسا ہی ایک اور معاملہ سامنے آیا ہے۔ صورتحال کو دیکھتے ہوئے چہارشنبہ کی صبح 8 بجے سے منگلورو کے ملالی میں واقع جامع مسجد کے 500 میٹر کے احاطہ میں سکشن 144 نافذ کر دیا گیا ہے۔ ہندو سماجی تنظیموں کا دعویٰ ہے کہ مندر کی جگہ پر جامع مسجد بنائی گئی تھی، اس لیے ‘تمبولا پرشنا انوشٹھان ‘ کی رسم کے بعد ‘اشتمنگلا پرنام’ کی تیاریاں شروع ہو گئیں۔ واضح رہے کہ حال ہی میں جامع مسجد میں تزئین نو کے کام کروائے گئے جس کے بعد یہ دعویٰ کیا گیا کہ مسجد کے نیچے سے ایک ہندو مندر سے مشابہہ آرکیٹیکچرل ڈیزائن ملا ہے۔ہندو تنظیموں نے دعویٰ کیا کہ مسجد کے مقام پر مندر ہونے کا ہر ممکن امکان ہے۔ حالات کو دیکھتے ہوئے علاقے میں سکشن 144 نافذ کردیا گیا ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button