تلنگانہ سکریٹریٹ کی مساجد کا مولانا مفتی خلیل احمد نے مسلم عوامی نمائندوں کے ساتھ مل کر رکھا سنگ بنیاد

حیدرآباد _  تلنگانہ سکریٹریٹ کی مساجد کی تعمیر نو کے سلسلہ میں دونوں مساجد کا آج سنگ بنیاد رکھاگیا۔مولا نا مفتی خلیل احمد شیخ الجامعہ جامعہ نظامیہ نے سنگ بنیاد کی رسم ایک سادہ تقریب میں ادا کی۔ ریاستی وزیرداخلہ محمد محمود علی،تلنگانہ اسمبلی میں مجلس کے فلورلیڈر جناب اکبرالدین اویسی، مجلسی ارکان اسمبلی سید احمد پاشاہ قادری، احمد بلعلہ،ٹی آرایس کے رکن کونسل فاروق حسین، جی ایچ ایم سی کے سابق ڈپٹی مئیر بابا فصیح الدین،مشائخ مولانااکبرنظام الدین حسینی صابری،منیر الدین مختار اور دیگر نے وہاں پر نمازظہرادا کی۔سنگ بنیاد 12.20بجے رکھاگیا۔سنگ بنیاد کی تقریب سے میڈیا کو دور رکھاگیا۔نئے سکریٹریٹ کی تعمیر کیلئے قدیم عمارتوں کے انہدام کے وقت دومساجدکو شہید اور ایک مندر کو منہدم کر دیا گیا تھاجس کے خلاف مسلمانوں نے آواز اٹھائی تھی۔وزیراعلی نے موجودہ مقامات پر مساجد کی دو بارہ تعمیر کا اعلان کیاتھا

دونوں مساجد کے لئے 1500 گزاراضی مختص کی گئی ہے اور طے شدہ ڈیزائن کے مطابق2.9کروڑ روپئے کا خرچ ان مساجد کی تعمیر پر عائد ہوگا۔پہلے مرحلہ میں ایک کروڑ روپئے سے مساجد کی تعمیر کا کام کیاجائے گا جبکہ دوسرے مرحلہ میں وضوخانہ، بیت الخلاوں اور امام کا کمرہ تعمیر کیاجائے گا۔ مساجد کی تعمیر اندرون ایک سال مکمل کرنے کا منصوبہ ہے تاکہ سکریٹریٹ کے افتتاح تک مساجد بھی عبادت کیلئے پوری طرح تیار رہیں۔ حکومت کے ایک نا مورآرکیٹکٹ سے مسجد کا پلان تیار کروایا ہے جو انتہائی خوبصورت ہے۔بتایاجاتا ہے کہ مندر اور چرچ کے تعمیری کاموں کے لئے علحدہ تاریخ طئے کی جائے گی۔