نیشنل

تاج محل کی مسجد میں نماز ادا کرنے پر4 نوجوان گرفتار۔ 3 کا حیدرآباد سے تعلق

آگرہ: تاج محل کی شاہی مسجد میں نماز ادا کرنے پرچارنوجوان کو پولیس نے گرفتار کرلیا جن میں سے تین کا تعلق حیدرآباد اورایک کا اعظم گڑھ سے بتایا گیا ہے۔ یہ چاروں سیاح کل تاج دیکھنے کیلئے آئے تھے۔ سی آئی ایس ایف نے سیاحوں کو تاج گنج پولیس اسٹیشن کے حوالے کر دیا ہے۔ تاج گنج پولیس کے مطابق انہوں نے تاج محل احاطہ میں واقع شاہی مسجد میں نماز ادا کی۔ اس دوران وہاں تعینات سی آئی ایس ایف کے عہدیداروں نے چاروں نوجوانوں کو حراست میں لے لیا۔ ان کے خلاف سی آئی ایس ایف کے حکام کی شکایت پرکیس درج کرلیا گیا ہے۔

پکڑے جانے والے نوجوانوں کے ساتھ تاج محل دیکھنے کیلئے آنے والے لکھنؤ کے ونئے کمار ڈکشٹ نے بتایا کہ چہارشنبہ کو وہ حیدرآباد کے تین اور اعظم گڑھ کےایک نوجوان کے ساتھ آگرہ آیا تھا۔ اس کے بعد وہ اور دیگر چار لوگ تاج محل دیکھنے آئے۔ جہاں ہر کوئی الگ الگ تاج محل میں گھوم رہا تھا۔ شام کو جب نماز کا وقت ہوا تو حیدرآباد کے تین نوجوان اور اعظم گڑھ کا نوجوان نماز پڑھنے کے لیے تاج محل کے احاطہ میں واقع شاہی مسجد پہنچے۔ جب چاروں نوجوان نماز ادا کر چکے تو وہاں تعینات سی آئی ایس ایف کے ملازمین نے چاروں کو حراست میں لے لیا۔ چاروں سیاحوں سے کئی گھنٹے تک پوچھ گچھ کی گئی اور اس کے بعد انہیں تاج گنج پولیس اسٹیشن کے حوالے کر دیا گیا۔

تاج گنج پولیس اسٹیشن کے انسپکٹر انچارج نے بتایا کہ سی آئی ایس ایف کی شکایت پر چار نوجوانوں کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 153 کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ ان میں تین نوجوان حیدرآباد اور ایک اعظم گڑھ سے ہیں۔ چاروں کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا کے مطابق تاج محل کے احاطہ میں واقع شاہی مسجد میں صرف جمعہ اور عید کی نماز ہی ادا کی جاتی ہے۔

متعلقہ خبریں

Back to top button