نیشنل

آئی ٹی ایکٹ کی دفعہ 66 اے کے تحت پولیس اسٹیشنوں میں کیسس درج نہ کیا جائے۔ مرکزکی ہدایت

حیدرآباد: مرکزی وزارت داخلہ نے تمام ریاستوں اور مرکزی زیر انتظام علاقوں سے خواہش کی ہے کہ وہ اپنے اپنے دائرہ اختیار کے تحت آنے والے تمام پولیس اسٹیشنوں کو ہدایت دیں کہ آئی ٹی ایکٹ 2000 کی منسوخ شدہ دفعہ 66 اے کے تحت کوئی معاملہ درج نہیں کیا جائے۔ وزارت نے ریاستوں اور مرکزی زیر انتظام علاقوں سے کہا ہے کہ وہ قانون نافذ کرنے والی ایجنسیوں کو سپریم کورٹ کے 24مارچ 2015 کے حکم پر عمل درآمد کے بارے میں بتائیں۔ وزارت نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں آئی ٹی قانون کی دفعہ 66 اے کے تحت کوئی معاملہ درج کیا گیا ہے تو اسے فوری طور پر واپس لیا جائے۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں اطلاعاتی ٹیکنالوجی قانون 2000 کی دفعہ 66 اے کو منسوخ کردیا تھا۔ اِس کے ساتھ ہی یہ دفعہ سپریم کورٹ کے حکم کی تاریخ سے ہی کالعدم ہوگئی ہے اور اِس دفعہ کے تحت کوئی کارروائی نہیں کی جاسکتی۔

متعلقہ خبریں

Back to top button